نواز شریف کی وزارت پانی و بجلی کو رمضان میں لوڈشیڈنگ کم کرنے کی ہدایت

نواز شریف کی وزارت پانی و بجلی کو رمضان میں لوڈشیڈنگ کم کرنے کی ہدایت

  

 اسلام آباد ( آئی این پی ) وزیراعظم نواز شریف نے وزارت پانی و بجلی کو ماہ رمضان میں لوڈشیڈنگ کم کرنے کی ہدایت کرتے ہوئے کہا ہے کہ سحر و افطار و نماز تراویح کیلئے لوڈ شیڈنگ نہیں ہونی چاہیے ، ‘ افطار و نماز تراویح کیلئے شام ساڑھے چھ سے لیکر ساڑھے دس بجے تک،سحری سے ایک گھنٹہ پہلے اور ایک گھنٹہ بعد لوڈ شیڈنگ نہیں ہونی چاہیے ، دن بھر میں لوڈ شیڈنگ کا دورانیہ منظور شدہ حد سے تجاوز نہ کرے ، ریکوریوں کا عمل تیز کیا جائے۔ جمعرات کو وزیراعظم نواز شریف کی زیر صدارت توانائی سے متعلق کابینہ کمیٹی کا 15 واں اجلاس ہوا۔ اجلاس میں وفاقی وزراء احسن اقبال‘ خواجہ آصف‘ خواجہ سعد رفیق ‘ وزیر مملکت عابد شیر علی‘ وزیراعلیٰ پنجاب شہباز شریف ، مشیر خارجہ سرتاج عزیز اور متعلقہ وزارتوں کے وفاقی سیکرٹری شریک ہوئے۔ اجلاس میں ملک میں توانائی کی صورتحال کا جائزہ لیا گیا ، اجلاس میں وزیراعظم نواز شریف نے نیلم جہلم منصوبے میں غیر ضروری تاخیر پر برہمی کا اظہار کیا ، نیلم جہلم منصوبے میں تاخیر کے باعث لاگت میں اضافہ ہوا ہے ، اجلاس میں نیلم جہلم منصوبے کی بروقت تکمیل کیلئے نجکاری یا شراکت داری کیلئے کمیٹی قائم کرنے کا فیصلہ کیا گیا ، کمیٹی منصوبے کی نجکاری یا شراکت داری کا جائزہ لیکر 3 ماہ میں رپورٹ پیش کرے گی ، اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ نیلم جہلم منصوبہ 2017ء کی پہلی سہ ماہی میں مکمل کیا جائے گا ۔ اجلاس میں توانائی سے متعلق جاری منصوبوں پر کام کی رفتار کا بھی تفصیلی جائزہ لیا گیا، سیکرٹری وزارت پانی و بجلی نے اجلاس کو بجلی کی طلب اور رسد پر اور نیلم جہلم پاور پراجیکٹ پر بریفنگ دی ، بریفنگ میں بتایا گیا کہ شہری علاقوں میں لوڈ شیڈنگ کا دورانیہ 6 گھنٹے اور دیہی علاقوں میں 8 گھنٹے ہے بجلی کی پیداوار 15ہزار 300میگا واٹ ہے۔ ملک میں بجلی کی پیداوار 16ہزار میگاواٹ سے بڑھ جانے کا امکان ہے گزشتہ روز بجلی کی پیداوار 16ہزار میگا واٹ جبکہ اوسط 15ہزار 200میگا واٹ تھی۔شہری علاقوں میں لوڈشیڈنگ کا دورانیہ چھ سے آٹھ گھنٹے ہیں۔ وزیراعظم نواز شریف نے ہدایت کی کہ ماہ مقدس میں لوڈشیڈنگ کو کم کیا جائے جبکہ سحر و افطار کے اوقات کار میں لوڈشیڈنگ بالکل نہ کی جائے، افطار و نماز تراویح کیلئے شام ساڑھے چھ سے لیکر ساڑھے دس بجے تک لوڈ شیڈنگ نہیں ہونی چاہیے ، سحری سے ایک گھنٹہ پہلے اور ایک گھنٹہ بعد لوڈ شیڈنگ نہیں ہونا چاہیے ، دن بھر میں لوڈ شیڈنگ کا دورانیہ منظور شدہ حد سے تجاوز نہ کرے ،بجلی سے متعلق ریکوریوں کا عمل بھی تیز کیا جائے

مزید :

صفحہ اول -