نادرا آفس ایبٹ روڑ میں ایجنٹ مافیا کا راج ‘ خراتین سے بدتمیزی ‘ شہری پریشان

نادرا آفس ایبٹ روڑ میں ایجنٹ مافیا کا راج ‘ خراتین سے بدتمیزی ‘ شہری پریشان

  

لاہور( افضل افتخار)نادرا آفس ا یبٹ روڈ میں شناختی کارڈ کے لئے آنے والے سائل کرپٹ اور بداخلاق افسروں کے رویوں سے ذلیل و خوار ہوگئے خواتین سائل سے سرعام خدمت کے مطالبے کرنے لگے ، ٹھنڈے پانی کی عدم دستیابی، شدید گرمی اور حبس کے شکار عوام میں غم و غصے کا اظہار،ناقص پارکنک اور سیکورٹی کا ناقص انتظامبھی عوام کے لئے درد سر بن گیا،ایجنٹ مافیا کا راج ،ایبٹ روڈ آفس کے انچارچ آغا علی رضا کی کھلم کھلا قوانین کی خلاف ورزیاں،وزیر اعظم میاں نواز شریف اور خادم اعلی پنجاب میاں شہباز شریف کے دعوے ہوا میں اڑا دئیے روز نامہ پاکستان کے سروے میں عوام نے شکایتوں کے انبار لگادئیے روز نامہ پاکستان سے گفتگو کرتے ہوئے اظہر علی نے کہا کہ میں بچے کا بی فارم بنوانے کے لئے آیا ہو ں مجھ سے ایسے پوچھ گچھ کی جارہی ہے کہ جیسے میں کوئی غیر ملکی ایجنٹ ہوں پہلے ہی پریشانی ہے مزید پریشان کیا جارہا ہے ندیم نے کہا کہ میں اپنے کارڈ کی تجدید کروانے کے لئے آیا ہوں لیکن یہاں پر کوئی بات سننے کو بھی تیار نہیں ہر اہلکار یہاں پر خوش گپیوں میں مصروف ہے اور عوام شدید گرمی میں پریشانی کا شکار ہیں جس کی ان کو فکر ہی نہیں ۔محمد نواز نے کہا کہ یہاں کے جو انچارج ہیں وہ تو کسی کی بات سننے کو تیار نہیں ہیں ۔اسلم ،اکبر اور سلیم نے کہا کہ ہم کارڈ بنوانے کے لئے آئے ہیں کبھی کہتے ہیں کہ اپنے والدین کی شناختی کارڈ کی کاپیاں لے کر آؤ کبھی بہن بھائی اور رشتہ داروں کی لانے کو کہتے ہیں اس سے قبل بھی ہمارے کارڈ بن چکے ہیں لیکن اب ری نیو کے لئے کیوں تنگ کیا جارہا ہے جبکہ دفتر کے باہر ایجنٹ ہمیں یہی کام پیسے لیکر بغیر کسی دستاویزات کروانے کی آفرز کررہے ہیں اس کا مطلب ہے کہ یہ ملی بھگت ہے انچارج کو شکایت کرنے کے باوجود وہ بات سننے کو تیار نہیں اور کہتاہے کہ آفس سے باہر چلے جاؤ ۔شمائلہ،سدرہ اور آمنہ نے کہا کہ بی فارم بنوانے کے لئے آئے تھے کبھی کہتے ہیں کہ والد کا اصل شناختی کارڈ لیکر آؤں اور کبھی کچھ کہتے ہیں بس تنگ کرنے کے بہانے ہیں اور انچارج کے پاس شکایت کے لئے گئے تو اس نے کوئی بات نہیں سنی اور ہم سے ادھر ادھر کی گپیں مارنا شروع کردیں ان کے خلاف سخت کارروائی عمل میں لائی جائے میں محکمہ کے اعلی حکام سے کہتی ہوں کہ ایسے افسر کے خلاف سخت کارروائی عمل میں لائی جائے ۔

مزید :

میٹروپولیٹن 1 -