قرضوں کا حساب ہم سے نہیں پیپلز پارٹی اور مشرف سے لیا جائے 34میں سے 32اداروں کے خفیہ فنڈز ختم کردئیے ، اسحق ڈار

قرضوں کا حساب ہم سے نہیں پیپلز پارٹی اور مشرف سے لیا جائے 34میں سے 32اداروں کے ...

اسلام آباد (آن لائن،اے این این)وزیر خزانہ اسحاق ڈار کہا ہے کہ قیام پاکستان کے وقت سے قرضوں کا حساب مسلم لیگ (ن )سے نہیں پیپلز پارٹی اور پرویز مشرف سے پوچھا جائے۔ میرے اثاثوں کی تفصیلات الیکشن کمیشن میں جمع ہیں۔ غلط الزمات لگانے والوں کو عدالت میں لے کر جاؤں گا۔ 34میں سے 32 اداروں کے خفیہ فنڈ زختم کرد یئے گئے ، اب انٹیلی جنس اداروں کے پاس سیکرٹ فنڈ رہ گئے ہیں، آپریشن ضرب عضب پر اب تک 145 ارب روپے خرچ ہوچکے ، سوارب مزید رکھے جارہے ہیں ،اٹھارہویں ترمیم کے بعد صوبے بھی بجٹ خسارے میں جاسکتے ہیں، طورخم بارڈر پر اب تک جو کچھ ہوا اچھا شگون نہیں۔ہفتہ کو قومی اسمبلی میں مالی سال2016-16 کے بجٹ میں شامل لازمی اخراجات کی منظوری کے دوران اظہارخیال کرتے ہوئے اسحاق ڈار نے کہا کہ حکومت مالیاتی خسارے میں کمی پر بھرپور توجہ دے رہی ہے، ہم نے گزشتہ تین سال کے عر صے میں ترقیاتی بجٹ میں دوگنا اضافہ کیا جبکہ مالیاتی خسارہ نصف رہ گیا ہے ہم نے 34میں سے 32 اداروں کے خفیہ فنڈ ختم کردیئے، اب انٹیلی جنس اداروں کے سوا کسی کے پاس سیکرٹ فنڈ نہیں، اٹھارویں ترمیم کے بعد صوبے خسارے میں جاسکتے ہیں، رواں مالی سال میں 3 صوبوں نے خسارے کے بجٹ پیش کئے ہیں اور یہ غیر قانونی نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ کشکول کی دیگ موجودہ حکومت نے نہیں بنائی ،2000سے 2013 تک لئے گئے قرضوں کے حوالے سے پرویز مشرف ، (ق)لیگ اور پیپلز پارٹی سے بھی پوچھا جائے،جو بھی قرضے لئے جاتے ہیں اس میں پارلیمنٹ کی منظوری شامل ہوتی ہے ۔اسحق ڈار نے کہا کہ کچھ ا اراکین اسمبلی کہتے ہیں کہ دال مہنگی کردی گئی ہے اگر دال مہنگی ہے تو مرغی کھائیں ہم نے مرغی 200 روپے فی کلوکردی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ لوگ صرف خبروں میں آنے کیلئے غیر ضروری باتیں کرتے ہیں، شیخ رشید جلد شادی کرلیں تاکہ انہیں بچوں کی ضروریات کے بارے میں علم ہوسکے۔ وہ شیخ رشید کو چیلنج کرتے ہیں اگر بیرون ملک ان کا ایک روپیہ بھی ثابت ہوجائے تو سیاست چھوڑ دیں گے۔ انہوں نے کہا کہ افغانستان سے معاملات پر حکومت باخبر ہے، طورخم بارڈر پر اب تک جو بھی ہوا ہے وہ اچھا شگون نہیں۔ آپریشن ضرب عضب پر اب تک 145 ارب روپے خرچ ہوچکے ہیں جبکہ 100 ارب مزید رکھے جارہے ہیں۔ اسحاق ڈار نے کہا کہ اگر کوئی ان کے بیرون ملک اثاثے ثابت کردے تو وہ مستعفی ہوجائیں گے اس ایوان کو دھرنوں یا سڑکوں کی سیاست میں نہ الجھائیں۔ ہمیں ایک دوسرے کی عزت کرنی چاہیے ،صرف خبر بنانے کے لئے فضول باتیں کی جاتی ہیں ۔ انہو ں نے کہا کہ معزز رکن کہتے ہیں ماش کی دال 260 روپے کلو ہوگئی ،چکن پر تمام سیلز ٹیکس اور ڈیوٹیز ختم کردی گئیں ، میں ان سے کہتا ہوں کہ وہ ماش دال کے بجائے چکن کھائیں ۔ معزز رکن اپنے حلقے میں لوگوں کو چکن کھانے کا مشورہ دیں، چکن کی اوسط قیمت 200 روپے فی کلو ہے ، ٹی سی پی کو دال درآمد کرنے کی ہدایت کی ہے ۔

مزید : صفحہ اول