عوام کو بنیادی سہولتوں کی فراہمی اولین ترجیح ہے،ریاض خان

عوام کو بنیادی سہولتوں کی فراہمی اولین ترجیح ہے،ریاض خان

  

پشاور(سٹاف رپورٹر)وزیر اعلیٰ خیبر پختونخوا کے معاون خصوصی برائے پبلک ہیلتھ ریاض خان نے کہا ہے کہ حکومت عوام کی فلاح وبہبود کے لئے بھرپور انداز میں کام کر رہی ہے اور عوام کی ترقی اور خوشحالی کے لئے ایک ایک پائی دیانتداری سے خرچ کی جا رہی ہے عوام کو بنیادی سہولتوں کی فراہمی کیلئے وسائل ترجیحی بنیادوں پر فراہم کئے جا رہے ہیں ان خیالات کا اظہار انہوں نے160 ملین روپے سے بننے والی 13 کلومیٹرچڑھ تا ایلم روڈ کا افتتاح کرتے ہوئے کیا اس موقع پر ریاض خان نے کہا کہ ترقیاتی منصوبے پسماندہ علاقوں کے عوام کا حق ہیں ان کی ترقی کا حق لوٹا رہے ہیں عوام کا معیار زندگی بہتر بنانے کیلئے مختلف ترقیاتی منصوبے تیزی سے مکمل کئے جا رہے ہیں انہوں نے کہا کہ عوامی فلاح و بہبود کے تمام ترقیاتی منصوبے وہاں کے عوام کی مشاورت سے مکمل کئے جارہے ہیں انہوں نے کہا کہ چڑھ تا ایلم روڈ منصوبہ مکمل ہونے کے بعد ایلم کی وادی سیاحوں کیلئے نہ صرف زیادہ پرکشش بن جائیں گی بلکہ مقامی لوگوں کی زندگیوں میں حقیقی انقلاب بھی آئے گا انہوں نے کہا کہ بونیر کے مختلف علاقوں میں دیگر جاری منصوبوں کو مکمل ہونے کے بعد پورے ضلع بونیر میں سیروتفریح کے نئے مقامات کھلیں گے اور سیاحت کو زبردست فروغ ملے گا انہوں نے کہا کہ پاکستان تحریک انصاف کی حکومت میں کرپشن،رشوت، اقرباء پروری اور ناقص مٹیریل کے استعمال کے دروازے ہمیشہ ہمیشہ کیلئے بندہوگئے ہیں ہم تمام تعمیراتی کام کا معائنہ ہر وقت کریں گے اور اہل علاقہ بھی ان ترقیاتی سکیموں پر کڑی نظر رکھے تاکہ کوئی اہلکار ناقص مٹیریل استعمال کرنے کی جرات بھی نہ کرسکے ریاض خان نے کہا کہ ضلع بونیر کو مثالی ضلع بنانے کیلئے کروڑوں روپے کی لاگت سے مزید منصوبے شروع کئے جارہے ہیں جس سے ضلع بونیر کا نقشہ ہی بدل جائے گا انہوں نے حکام کو خبردار کیا ہے کہ عوامی مفاد کے ان ترقیاتی منصوبوں میں غیر ضروری تاخیر کسی صورت برداشت نہیں کی جائے گی اور تاخیر کی صورت میں ذمہ داروں کے خلاف قانون کے مطابق کاروائی عمل میں لائی جائے گی انہوں نے کہا کہ ترقیاتی منصوبے عوام کی ضرورت ہیں ان کی بروقت تکمیل بہت اہم ہے ہر یونین کونسل کے دورے کرکے ترقیاتی منصوبوں کا خود جائزہ لے رہا ہوں ہر بڑے چھوٹے ڈویلپمنٹ پراجیکٹ پر نظر ہے بے ضابطگیاں نہیں کرنے دیں گے۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -