"اگر بات ہار جیت کی ہے تو میں کیس جیت گیا" جسٹس فائز عیسیٰ کیس میں حکومتی وکیل فروغ نسیم کا دعویٰ

"اگر بات ہار جیت کی ہے تو میں کیس جیت گیا" جسٹس فائز عیسیٰ کیس میں حکومتی وکیل ...

  

اسلام آباد (ڈیلی پاکستان آن لائن) جسٹس قاضی فائز عیسیٰ کیس میں حکومت کی نمائندگی کرنے والے وکیل بیرسٹر فروغ نسیم کا کہنا ہے کہ اگر بات ہار جیت کی ہے تو وہ کیس جیت گئے ہیں کیونکہ ان کا مقصد ہے کہ سب کا بلا امتیاز احتساب ہو۔

نجی ٹی وی دنیا نیوز کے پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے بیرسٹر فروغ نسیم نے کہا کہ کیس ہار یا جیت کا نہیں تھا بلکہ اس سے بھی زیادہ ضروری عدالتی معاونت تھی، اگر ہار جیت کی بات کی جائے تو تکنیکی طور پر ہم کیس جیت گئے ہیں، کسی کو سزا یا جزا جیت نہیں، ہر آدمی کا احتساب ہماری جیت ہے۔

انہوں نے کہا کہ وفاق سمیت کسی کو جسٹس قاضی فائز عیسیٰ سے دشمنی نہیں، ان کیلئے اس سے زیادہ کوئی تکلیف دہ کیس نہیں رہا۔ جسٹس فائز عیسیٰ ان کے ساتھی وکیل رہے، وہ عدالت میں ان کے سامنے پیش ہوئے  ہیں۔ جسٹس فائز عیسیٰ کمرہ عدالت میں آئے تو انہیں تکلیف ہوئی۔

جسٹس قاضی فائز عیسیٰ کی اہلیہ سرینا عیسیٰ کے حوالے سے فروغ نسیم نے کہا کہ  سرینا صاحبہ نے جن چیزوں کی نشاندہی کی انہیں وہ ایف بی آر کو دینا ہوں گی، بتایا جائے کہ اثاثے کیسے خریدے اور باہر کیسے بھجوائے؟ سپریم جوڈیشل کونسل جانچے گی کہ منی ٹریل دی یا نہیں؟ منی ٹریل کی درستگی کا تعین ایف بی آر اور سپریم جوڈیشل کونسل میں ہوگا۔

مزید :

اہم خبریں -قومی -