قائد اعظم یونیورسٹی کے طالب علم کے ساتھ اسلامی یونیورسٹی میں اجتماعی زیادتی

قائد اعظم یونیورسٹی کے طالب علم کے ساتھ اسلامی یونیورسٹی میں اجتماعی زیادتی
قائد اعظم یونیورسٹی کے طالب علم کے ساتھ اسلامی یونیورسٹی میں اجتماعی زیادتی
سورس: Twitter

  

اسلام آباد (ڈیلی پاکستان آن لائن) شہرِ اقتدار کی قائد اعظم یونیورسٹی کے ایک طالب علم کے ساتھ بین الاقوامی اسلامی یونیورسٹی میں اجتماعی زیادتی کی گئی ہے۔

متاثرہ طالب علم اپنے اخراجات پورے کرنے کیلئے ڈلیوری بوائے کے طور پر کام کرتا ہے۔ وہ اسلامی یونیورسٹی کے ہاسٹل نمبر ایک میں ڈلیوری دینے گیا تو اسے ہاسٹل میں تین لڑکوں نے پکڑ کر کمرے میں بند کردیا اور پوری رات زیادتی کا نشانہ بناتے رہے۔

اسلامی یونیورسٹی کے ریکٹر ڈاکٹر معصوم یاسین زئی نے 24 سالہ طالب علم کے ساتھ اجتماعی بدفعلی کی تصدیق کی اور بتایا کہ یونیورسٹی انتظامیہ ہی متاثرہ طالب علم کو لے کر پمز ہسپتال گئی۔ انہوں نے بتایا کہ متاثرہ طالب علم نے ملزمان کے خلاف قانونی کارروائی سے انکار کردیا ہے۔

ویب سائٹ پاکستان 24 نے دعویٰ کیا ہے کہ یونیورسٹی انتظامیہ کی جانب سے طالب علم پر دباؤ ڈال کر اسے قانونی کارروائی سے باز رکھا گیا ہے۔

مزید :

جرم و انصاف -علاقائی -اسلام آباد -