اشٹام ڈیوٹی ڈبل کرنے کے منفی اثرات مرتب ہونگے، بلڈر اینڈ ڈویلپرز

 اشٹام ڈیوٹی ڈبل کرنے کے منفی اثرات مرتب ہونگے، بلڈر اینڈ ڈویلپرز

  

لاہور(رپورٹ: میاں اشفاق انجم، تصاویر ایوب بشیر) وفاقی بجٹ میں رئیل اسٹیٹ سیکٹر کو نظر انداز کیا گیا فائلر کیلئے ٹیکس ایک فیصد سے بڑھا کر 2فیصد کرنا اور پنجاب حکومت کی طرف سے اشٹام ڈیوٹی ڈبل کرنے کے فیصلے سے منفی اثرات مرتب ہوں گے پٹرول مصنوعات کی قیمتوں میں بے تحاشا اضافے سے کاروباری ٹرین رک جائے گی اوورسیز پاکستانیوں کے لئے خصوصی ریلیف پیکیج اور بلڈنگز میٹریل پر ٹیکسز کم کئے جائیں۔ گین ٹیکس کی مدت سال سے کم کرکے 3سال کی جائے ڈی سی ریٹس ختم کرنے کا فیصلہ تسلیم نہیں کریں گے ایف بی آر ریٹس مسلط کرنے سے حکومت باز رہے ڈالر کی اڑان روکنے کے لئے عملی اقدامات کئے جائیں روپے کی بے قدری سے ملکی معیشت غرق ہو رہی ہے۔ ان خیالات کا اظہار ڈی ایچ اے،جوہر ٹاؤن،بحریہ ٹاؤن، گلبرگ، ایل ڈی اے ایونیو ون سنٹرل پارک کے سینئر رئیل اسٹیٹ ایجنٹس بلڈر اور ڈویلپرز نے وفاقی اور صوبائی بجٹ پر ردعمل دیتے ہوئے کیا۔ راشد بشیر نے کہا ہے ڈالر کی اڑان نے روپے کی قدر میں کمی کی ہے اور ہر سطح پر ڈاؤن فال جاری ہے موجودہ حکومت کی طرف سے روپے کی مضبوطی کیلئے قابل قدر اقدام سامنے نہیں آیا ہے۔ عبدالمجید منہاس نے بجٹ کو مایوس کن قرار دیا ہے میاں لطیف نے اشٹام ڈیوٹی بڑھانے کے فیصلے کو مسترد کرتے ہوئے واپس ایک فیصد کرنے کا مطالبہ کیا ہے حاجی لطیف چودھری نے گین ٹیکس کی صورت 3سال کرنے کا مطالبہ کیا ہے میاں جاوید حسن،اختر عباسی، ارشد کھوکھر نے پراپرٹی کی خریداری کرنے والوں کے ٹیکس میں اضافہ مسترد کرتے ہوئے اضافہ شدہ ٹیکس واپس لینے کا مطالبہ کیا ہے ارشد کھوکھر، اظہر جی ایم اعوان، مظہر باجوہ، ملک جاوید نے اوورسیز پاکستانیوں کو ووٹ کا حق دینے اور پراپرٹی میں سرمایہ کاری کرنے والوں کے لئے خصوصی مراعات دینے کا مطالبہ کیا ہے۔ انہوں نے کہا حکومت کی ناقص پالیسی کی وجہ سے سرمایہ کار مایوس ہو کر اپنی دولت باہر منتقل کر رہا ہے حکومت فوری اقدامات کرے۔

بلڈر اینڈ ڈویلپرز

مزید :

صفحہ آخر -