مہمند‘ ترقیاتی منصوبوں کیلئے مختص فنڈز کی بندش نا انصافی ہے

  مہمند‘ ترقیاتی منصوبوں کیلئے مختص فنڈز کی بندش نا انصافی ہے

  

ضلع مہمند (نمائندہ پاکستان) ضلع مہمند کے تحصیل حلیمزء ہیڈکواٹر غلنء کے قریب خواجہ وس غلنء گاوں کے دو ہزار سے زیادہ کے آبادی کیلئے پاک پی ڈبلیو ڈی کی جانب سے ایک کلومیٹر سڑک کی منظوری دی گء تھی جس میں 28 ہزار فٹ کام مکمل ہوچکا ہے اور صرف 3 سو فٹ کام باقی ہے جس پرکام بند ہوگیا ہے مقامی لوگوں کا کہنا ہے کہ اس سڑک سے گاوں کے لوگوں کو آمد ورفت اور پانی ٹینکر لانے میں مشکلات ہے لھذا اس پر کام مکمل کیا جائے۔دوسری جانب کوز گنداو کٹہ سر گاوں کیلئے بھی ایک کلومیٹر سڑک میں 70 فیصد کام مکمل ہوچکا ہے اور 30 فیصد کام باقی ہے۔جس سے لوگوں کو شدید مشکلات کا سامناہے۔پاک پی ڈبلیو ڈی کی جانب سے گاوں ادین خیل۔گاوں چاندہ اور کوزگنداو ملک رویل مرحوم گاوں میں ڈگ ویلوں پر 80 فیصد کام مکمل ہوچکا ہے صرف 20 فیصد کام باقی ہے جس پر کام بند کیا گیاہے ان لوگوں کا کہنا تھا کہ سخت گرمی میں خواتین دور دراز سے اپنے سروں پر پانی لانے پر مجبور ہیں جبکہ پانی کی ٹینکی 4 ہزار روپے پر ملتے ہیں جو کہ غریب لوگوں کے بس سے باہر ہے۔انہوں نے کہا کہ ہمیں کونسے گناہوں کی سزا دی جارہی ہے کیونکہ بڑی محنت سے ان ترقیاتی کاموں کو منظور کئے ہیں جس پر کام بھی زیادہ تر مکمل ہوچکا ہے لیکن مزید کام کی بندش ہمارے ساتھ ظلم اور نا انصافی ہے اسلئے حکومت اور ذمہ دار ادارے اس پر دوبارہ کام شروع کرکے اس منصوبوں کو جلد ازجلد مکمل کرلے تاکہ ہزاروں لوگوں کی ابادی کو فائدہ ہوسکے۔کیونکہ ضلع مہمند میں سب سے زیادہ قلت پانی کی ہے۔اور اگر اسطرح ان منصوبوں پر کام بند رہے تو ہم ہجرت کرنے پر مجبور ہوجائنگے۔یاد رہے کہ ضلع مہمند میں پاک پی ڈبلیو ڈی کی جانب سے کروڑوں روپے کی سڑکوں اور پانی کی منصوبوں پر کام بند کیا گیا ہے جس میں اکثرمنصوبوں پر 70 فیصد سے زیادہ کام مکمل ہوچکا ہیں جبکہ باقی 30 فیصد کام کو بند کیا گیا ہے جس سے لوگوں کو شدید مشکلات کا سامناہے

مزید :

پشاورصفحہ آخر -