اٹلی نے عالمی قوانین کی خلاف ورزی پر بھارت کو آنکھیں دکھا دیں

اٹلی نے عالمی قوانین کی خلاف ورزی پر بھارت کو آنکھیں دکھا دیں
اٹلی نے عالمی قوانین کی خلاف ورزی پر بھارت کو آنکھیں دکھا دیں

  

نئی دہلی(مانیٹرنگ ڈیسک)اٹلی نے ہندوستان کی سپریم کورٹ کی جانب سے اپنے سفیر ڈینیل منچنی کے ملک چھوڑنے پر پابندی کو سفارتی استثنی کے عالمی قوانین کی خلاف ورزی قرار دیا ہے۔اٹلی نے امید ظاہر کی ہے کہ اطالوی نیوی اہلکاروں کی فائرنگ سے ہلاک ہونے والے دو مقامی ماہی گیروں پر کھڑے ہونے والے تنازعہ کو خوش سلوبی سے حل کر لیا جائے گا۔خیال رہے کہ گزشتہ سال کوچی کے سمندری ساحل پر اطالوی تیل بردار ٹینکر کی نگرانی کرنے والے دو نیوی اہلکاروں نے مقامی ماہی گیروں کو بحری قزاق سمجھ کر ان پر گولی چلا دی تھی۔ان اہلکاروں کو بعد ازاں گرفتار کرلیا گیا تھا,تاہم اطالوی سفیر کی اس یقین دہانی کے بعد کہ انتخابات میں حصہ لینے اور ایسٹر کی تقریبات میں شرکت کے بعد ان اہلکاروں کو ہندوستان کے حوالے کردیا جائے گا، دونوں کو رہا کردیا گیا تھا۔لیکن اس معاملے نے اس وقت سنجیدہ رخ اختیار کر لیا جب اٹلی کی حکومت نے اعلان کیا کہ دونوں اہلکاروں کو ‘کسی صورت’ ہندوستان کے حوالے نہیں کیا جائے گا۔جس پر ہندوستان کے وزیر اعظم ڈاکٹر من موہن نے غصے بھرا ردعمل ظاہر کیا تھا۔گزشتہ روز ہندوستان کے چیف جسٹس التمس کبیر نے کیس کی سماعت کے دوران اپنے ریماکس میں کہا تھا کہ ‘جو شخص عدالت میں رضاکارانہ طور پر بیان حلفی دے، اسے استثنی حاصل نہیں رہتا’۔تاہم اب روم میں دفترخارجہ کا کہنا ہے کہ منچنی پر پابندیاں ‘واضح طور’ پر سفارت کاروں کی نقل و حرکت کے حقوق اور انہیں حاصل قانونی استثنی سے متعلق ویانا کنونشن کی خلاف ورزی ہے۔

مزید : بین الاقوامی