بوئنگ طیارہ کوئی غبارہ نہیں جسے جیب میں ڈال کر چھپا لیا جائیگا،پرویز رشید

بوئنگ طیارہ کوئی غبارہ نہیں جسے جیب میں ڈال کر چھپا لیا جائیگا،پرویز رشید ...

747                                                          اسلام آباد (این این آئی) وفاقی وزیر اطلاعات ونشریات و قومی ورثہ سینیٹر پرویز رشید نے کہا ہے کہ پاکستان کی فضائی سرحدیں انتہائی محفوظ ہیں،747بوئنگ طیارہ کوئی غبارہ نہیں جسے جیب میں ڈال کر چھپا لیا جائے گا، ہم کوئی نیا معاہدہ نہیں کرنے جارہے، پیپلزپارٹی دور کے معاہدوںکی بھی پاسداری کررہے ہیں،پاکستان باوقار ملک ہے جو غیرملکی معاہدوں کی پاسداری کرتا ہے، بھارت نے 1998ءسے پاکستان کو انتہائی پسندیدہ ملک قرار دے رکھا ہے، طالبان مذاکراتی کمیٹی کا کوئی مطالبہ حکومتی کمیٹی کے پاس آئے گا تو وہ اس پر اداروں سے استفسار کرکے مناسب جواب دے گی، تمام سیاسی جماعتیں مذاکرات کی حامی ہیں اور سب نے مل کر فیصلہ کیا ہے، قیام امن کسی صوبہ کا نہیں پاکستان کا ایشو ہے، اس لئے پاکستانی بن کر سوچنا چاہئے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے منگل کو نیشنل بک فاﺅنڈیشن میں ریڈرز کلب کے اجراءکی تقریب کے بعد صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔ ایک سوال پر وزیر اطلاعات نے کہا کہ مولانا فضل الرحمان ہمارے اتحادی ہیں اور ان سے ملاقاتوں کا سلسلہ رہنمائی اور مشاورت کےلئے جاری رہتا ہے اور آج کی ملاقات بھی موجودہ ملکی صورتحال پر ان سے تبادلہ خیال اور رہنمائی کےلئے تھی جو مفید اور مثبت رہی ۔ انہوں نے کہا کہ نیشنل سیکیورٹی کے حوالے سے پالیسی پر صوبوں نے عملدرآمد کرنا ہے اس لئے ان سے مشاورت کےلئے اجلاس بلایا گیا تھا جس میں وزرائے اعلیٰ سے مشاورت کی گئی ہے، تمام کوششیں قیام امن کےلئے ہیں اور یہ پورے ملک کا ایشو ہے کسی ایک صوبے کا نہیں اس لئے پاکستانی بن کر سوچنا چاہئے۔ طالبان کی طرف سے 300 قیدیوں کی فہرست کے حوالے سے سوال کے جواب میں وزیر اطلاعات نے کہا کہ حکومت نے طالبان سے مذاکرات کےلئے کمیٹی بنائی ہے اور طالبان کمیٹی کی طرف سے جو بھی مطالبہ آیا ہے یا آئے گا وہ حکومتی کمیٹی کے پاس آئے گا اورحکومتی کمیٹی متعلقہ اداروں سے پوچھ کر بات چیت کو آگے بڑھائے گی۔ ڈالر کی قدر میں کمی کے حوالے سے سوال کا جواب دیتے ہوئے انہوں نے کہا کہ ہمیں کسی کی کرنسی کی قدر کم ہونے سے مطلب نہیں، روپے کی قدر میں اضافہ کی اہمیت ہے اور جب پاکستانی روپیہ مضبوط ہوتا ہے تو براہ راست قوت خرید بڑھ جاتی ہے، یہ اقتصادیات کا سادہ اصول ہے۔ ملائیشیا کے لاپتہ طیارے کے بارے سوال پر انہوں نے کہا کہ 747 بوئنگ طیارہ کوئی غبارہ نہیں جسے کوئی جیب میں ڈال لے گا اور 4 ہوائی اڈے ہی ہیں جہاں طیارہ اتر سکتا تھا۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان کی فضائی سرحدیں انتہائی محفوظ ہیں ، کوئی بھی غیرمعمولی چیز اس حدود میں آتی ہے تو سسٹم بتاتا ہے اس لئے یہ صرف میڈیا پر قیاس آرائیوں اور تبصروں کی باتیں ہیں۔ انہوں نے کہا کہ بھارت نے 1998ء سے پاکستان کو انتہائی پسندیدہ ملک (موسٹ فیورٹ نیشن) قرار دے رکھا ہے اور پاکستان پیپلزپارٹی کے سابقہ دور میں کچھ معاہدے کئے گئے تھے، ہم ان کی پاسداری کررہے ہیں، کوئی نیا معاہدہ اس ضمن میں کرنے نہیں جارہے۔ پاکستان باوقار ملک ہے جو غیرملکی معاہدوں کی پاسداری کرتا ہے اور ہم اس حیثیت سے تمام معاہدوں کی پاسداری کررہے ہیں۔

حکومت نے جے یو آئی ف کے سربراہ مولانا فضل الرحمان کے تحفظات دور کرنے کی یقین دہانی کرا دی۔ وفاقی وزیر اطلاعات پرویز رشید نے کہا ہے کہ مولانا فضل الرحمان نے تمام قومی امور پر تعاون کی یقین دہانی کرائی ہے۔دریں اثناءایک ٹی وی چینل کے مطابق مولانا فضل الرحمان سے وفاقی وزراءاسحاق ڈار اور پرویز رشید نے اسلام آباد میں ملاقات کی۔ملاقات میں ملکی سیاسی اور سیکورٹی صورتحال پر تبادلہ خیال کیا گیا۔مولانا فضل الرحمان نے حکومتی رہنماو¿ں کو اپنے تحفظات سے آگاہ کیا۔اسحاق ڈار اور پرویز رشید نے مولانا فضل الرحمان کو تحفظات دور کرنے کی یقین دہانی کرائی۔ مولانا فضل الرحمان کو جے یو آئی کے وزراءکو قلمدان نہ ملنے پر شدید تحفظات تھے۔ میڈیا سے غیر رسمی گفتگو کے دوران پرویز رشید نے کہا کہ مولانا فضل الرحمان سے ملاقات میں حکومتی اتحاد پر بات چیت کی گئی۔ مولانا فضل الرحمان نے تمام قومی امور پر تعاون کی یقین دہانی کرائی ہے۔ پرویز رشید نے کہا کہ جے یو آئی کے وزراءکو جلد قلمدانوں کا نوٹیفکیشن جاری کر دیا جائے گا۔انہوں نے کہا کہ ملاقات میں اتفاق کیا گیا کہ امن کا راستہ بات چیت کے ذریعے ہی تلاش کیا جانا چائے

مزید : صفحہ اول