چولستان قحط کے دہانے پر، بچیوں نے ”ساڈا حق، ایتھے رکھ“ کا نعرہ لگادیا

چولستان قحط کے دہانے پر، بچیوں نے ”ساڈا حق، ایتھے رکھ“ کا نعرہ لگادیا
چولستان قحط کے دہانے پر، بچیوں نے ”ساڈا حق، ایتھے رکھ“ کا نعرہ لگادیا

روزنامہ پاکستان کی اینڈرائیڈ موبائل ایپ ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

بہاولپور (مانیٹرنگ ڈیسک)پنجاب کے سب سے بڑے صحرا چولستان میں بھی سندھ کے صحرائی علاقے تھر جیسی قحط کی صورتحال پیدا ہوگئی ہے جہاںپینے کیلئے پانی نہیں اورکھانے کو خوراک بھی نہ ہونے کے برابر ہے ، انسان اور جانورایک گھاٹ پانی پینے پر مجبور ہو گئے ہیں اور وہاں کے چھوٹے چھوٹے بچوں نے وزیراعلیٰ کو مخاطب کر کے ’ساڈا حق، ایتھے رکھ“ کہتے ہوئے اپنا حق مانگ لیا ہے۔ دنیا نیوز کے مطابق چولستان کے بہت سے لوگ ممکنہ قحط کے پیش نظر نقل مکانی کر کے بڑی آبادیوں میں آ گئے ہیں اور متعدد لوگ وہیں رہتے ہوئے جانوروں کے ساتھ ایک ہی گھاٹ سے پانی پینے پر مجبور ہیں، گندا پانی پینے سے متعدد افراد موت کے منہ میں بھی جا چکے ہیں ، علاقے میں فوری طور پر ایمرجنسی نافذ کرنے اور ہنگامی بنیادوں پر لوگوں کی بحالی کے اقدامات نہ کئے گئے تو یہ قحط سنگین صورتحال اختیار کر سکتا ہے اور مزید بہت سے لوگ موت کے منہ میں جا سکتے ہیں۔ چولستان میں قائم ڈسپنسری پر ڈاکٹر کے فرائض ڈسپنسر سرانجام دے رہا ہے جو زیادہ تر مریضوں کا علاج اپنے پرائیویٹ کلینک میں کرنا پسند کرتا ہے، سکول کی حالت بھی ابتر ہے جہاں بچے کھلے آسمان تلے تپتی دھوپ میں تعلیم حاصل کر ر ہے ہیں، سکول میں ایک ہی استانی تعینات ہے جو 5000 روپے کے عوض بہت سے بچوں کو تعلیم کے زیور سے آراستہ کر رہی ہے۔ٹی وی پروگرام کے اختتام پر جب ایک بچی سے پوچھاگیاکہ وہ وزیراعلیٰ پنجاب کوکیا کہناچاہتی ہیں تو اُس نے نعرہ لگا یاکہ ’ساڈا حق ، ایتھے رکھ‘ جس کے بعد دیگربچے بھی اس کے ساتھ مل گئے اور اجتماعی طورپر ساڈا حق ایتھے رکھ کے نعرے شروع کردیئے ۔

مزید : قومی