لاپتہ افرادکیس میں ملوث فوجی افسران کیخلاف مقدمات کے اندراج کی یقین دہانی پر سماعت جمعرات تک ملتوی

لاپتہ افرادکیس میں ملوث فوجی افسران کیخلاف مقدمات کے اندراج کی یقین دہانی پر ...
لاپتہ افرادکیس میں ملوث فوجی افسران کیخلاف مقدمات کے اندراج کی یقین دہانی پر سماعت جمعرات تک ملتوی

  

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک )اٹارنی جنرل کی لاپتہ افراد کی گمشدگی میں ملوث فوجی افسران کیخلاف مقدمہ درج کرنے کی یقین دہانی پر سپریم کورٹ نے جمعرات تک مہلت دیدی اورریمارکس دیئے کہ اہم پیش رفت ہے ، معاملہ کل دیکھیں گے ، بارہاکہاکہ آئین و قانون کے مطابق ہی کام ہوگا۔ جسٹس جواد ایس خواجہ کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے تین رکنی بینچ نے لاپتہ افراد کیس کی سماعت کی ۔ دوران سماعت عدالت نے یقین دہانی کے باوجود لاپتہ افراد کی عدم پیشی پر برہمی کا اظہارکرتے ہوئے وزارت دفاع کا موقف سننے سے انکار کردیاہے اور ریمارکس دیئے ہیں کہ 35سماعتیں ہوچکی ہیں ، ابھی تک دوانچ بھی پیش رفت نہیں ہوسکی ،فیصلہ دیں گے ۔ اٹارنی جنرل نے موقف اپنایاکہ وزیراعظم ذمہ دارنہیں ، حراستی مراکز صوبوں کے پاس ہیں ، صرف وزیراعلیٰ خیبرپختونخواہ کو نوٹس جاری کریں جس پر عدالت نے اٹارنی جنرل کو ہدایت کی کہ وہ لکھ کر دیں کہ وزیراعظم آئین میں موجود بنیادی حقوق کے تحفظ کے ذمہ دارنہیں ۔عدالت نے وزارت دفاع کو اپناموقف پیش کرنے سے روکتے ہوئے ایڈیشنل سیکرٹری دفاع سے مکالمہ کیاکہ آج35ویں سماعت ہے اور ہمیں اب حکومتی رپورٹس میں کوئی دلچسپی نہیں ۔جسٹس جواد نے اٹارنی جنرل کو مخاطب کرکے کہا کہ آپ بیٹھ جائیں ،ہمیں اب جو کرنا ہے وہی کر نا ہے ، 15اگست سے کہہ رہے ہیں کہ حکم نامے پر عمل کریں ،کب سے مقدمہ سن رہے ہیں لیکن کوئی پیش رفت نہیں ہوئی ۔اٹارنی جنرل نے موقف اپنایاکہ وزیراعظم ذمہ داری نہیں ، صرف وزیراعلیٰ کو نوٹس جاری کریں جس پر عدالت نے اٹارنی جنرل کو ہدایت کی کہ وہ لکھ کر دے دیں کہ وزیراعظم آئین میں موجود بنیادی حقوق کا تحفظ ان کی ذمہ داری نہیں ہے ،آئین میں موجود بنیادی حقوق سے متعلق شقوں کی کوئی اہمیت ہے بھی یا نہیں؟ اٹارنی جنرل نے کہا کہ لاپتہ افراد کے بارے میں کمیشن بنا دیا ہے جس پر جسٹس جواد ایس خواجہ نے کہا ہے کہ کمیشن جنوری میں بنا تھا اور اب دو ماہ ہوچکے ہیںاوراٹارنی جنرل کو متعلقہ حکام سے ہدایات لینے کی ہدایت کرتے ہوئے سماعت کچھ دیر کیلئے ملتوی کردی ۔ وزیراعظم سے رابطے کے بعد اٹارنی جنرل نے عدالت کو بتایاکہ 10دسمبر کے حکم پر بہت پہلے عمل درآمد ہوجاناچاہیے تھا،تاخیر پر معذرت خواہ ہیں ،لاپتہ افراد کو لے جانیوالے فوجی افسران کیخلاف آج رات تک مقدمہ درج کردیاجائے گا۔عدالت نے جمعرات تک مہلت دیتے ہوئے ریمارکس دیئے کہ اہم پیش رفت ہوئی ، معاملہ کل دیکھیں گے ، آئین سے اوپر کوئی بھی نہیں ہوگا، بارہاکہاکہ مکل میں آئین و قانون چلے گا۔اٹارنی جنرل کی یقین دہانی پر عدالت نے مقدمے کے اندراج کی نقل پیش کرنے کی ہدایت کرتے ہوئے سماعت جمعرات کی دوپہر12بجے تک ملتوی کردی ۔

مزید : اسلام آباد /Headlines