جو سائنس کی بات نہ مانے اُسے جیل میں ڈال دو

جو سائنس کی بات نہ مانے اُسے جیل میں ڈال دو
جو سائنس کی بات نہ مانے اُسے جیل میں ڈال دو

  

نیو یارک (مانیٹرنگ ڈیسک) کہتے ہیں کہ ہمارے معاشرے میں شدت پسندی بہت بڑھ رہی ہے اور ہم لوگ ہر معاملہ کو جذباتی انداز میں ڈیل کرتے ہیں۔ تاہم امریکی یونیورسٹی کے ایک پروفیسر نے اپنے رویے سے بڑے بڑوں کو پیچھے چھوڑ دیا ہے۔ راچسٹر انسٹیٹیوٹ آف ٹیکنالوجی کے پروفیسرلارنس ٹورسلو نے مطالبہ کیا ہے کہ ایسے افراد جو اس بات پر یقین نہیں رکھتے کہ گلوبل وارمنگ انسانوں کی کارستانیوں کا نتیجہ ہے، انہیں جیل میں ڈال دینا چاہیے۔ ان خیالات کا اظہار پروفیسر صاحب نے اپنے ایک تازہ مضمون میں کیا ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ چند افراد اس حوالے سے غلط معلومات پھیلانے کے لئے مہم چلا رہے ہیں۔ سائنس سے متعلق غلط معلومات پھیلانا جرم قرار دیا جانا چاہیے۔ انہوں نے مثال بھی دی ہے کہ اٹلی میں چھ سائنسدانوں کو سزا دی گئی تھی کیونکہ وہ لوگوں کو واضح طور پر ”ارتھ کوئیک زون“ (زلزلے کے خطرے والے علاقے ) میں رہنے کے خطرات سے آگاہ کرنے میں ناکام رہے۔ پروفیسر صاحب کے ان مطالبات پر امریکی میڈیا میں ایک طوفان برپا ہے اور اسے شخصی آزادی پر حملہ قرار دیا جارہا ہے۔ اب کسے معلوم، ہوسکتا ہے یہ سازش بھی ان کے مخالفین کی ہی رچائی ہو۔

مزید : سائنس اور ٹیکنالوجی