بوم آفریدی یا جے دھونی،ٹی20ورلڈکپ میں روایتی حریف آج آمنے سامنے ہونگے

بوم آفریدی یا جے دھونی،ٹی20ورلڈکپ میں روایتی حریف آج آمنے سامنے ہونگے

  

 کولکتہ (اے پی پی+ آن لائن) چھٹے آئی سی سی ورلڈ کپ ٹی 20 سپر ٹین مرحلے کا سب سے بڑا میچ (آج) ہفتہ کو روایتی حریف پاکستان اور بھارت کے درمیان ایڈن، گارڈن کولکتہ میں کھیلا جائیگا۔ میچ پاکستانی وقت کے مطابق رات 7 رات شروع ہوگا۔ بھارتی ٹیم اپنا پہلا گروپ میچ نیوزی لینڈ سے ہار چکی ہے اور سیمی فائنل کی دوڑ میں رہنے کیلئے دھونی الیون کیلئے یہ میچ بڑی اہمیت کا حامل ہے، شکست کی صورت میں اس کے سیمی فائنل میں پہنچنے کے امکانات بہت کم ہو جائیں گے ۔ بھارت کی ٹیم جو گروپ 2 میں پاکستان کے ساتھ شامل ہے کو اپنے پہلے میچ میں نیوزی لینڈ کے خلاف 47 رنز سے شکست کا سامنا کرنا پڑا۔ بنگلہ دیش کے خلاف میچ جیتنے کی وجہ سے قومی ٹیم کا مورال بلند ہے لیکن بھارت کی ٹیم نے ایشیا کپ میں پاکستان ٹیم کو شکست دی تھی۔ فاسٹ باؤلر محمد عامر کی وجہ سے پاکستان کا باؤلنگ اٹیک کافی مضبوط نظر آرہا ہے۔دونوں ٹیموں کے مابین 2007ء سے 2016ء تک 7 ٹی ٹونٹی میچز کھیلے گئے جس میں سے پاکستان کی ٹیم نے ایک میچ جیتا جبکہ بھارت کی ٹیم نے 5 میں کامیابی حاصل کی اور ایک میچ ٹائی ہوا۔ بھارت کی سر زمین پر دونوں ٹیموں کے مابین دو ٹی ٹونٹی میچز ہوئے جس میں سے ایک میں پاکستان نے اور ایک میں بھارت نے کامیابی حاصل کی۔ پاکستان اور بھارت کے مابین اب تک ہونے والے ورلڈ ٹی ٹونٹی میچز میں بھارت کی ٹیم ناقابل شکست رہی ہے۔ دونوں ٹیموں کا ورلڈ ٹی ٹونٹی مقابلوں میں چار بار آمنا سامنا ہوا ۔ بھارت کی ٹیم نے تین میچز میں کامیابی حاصل کی جبکہ ایک میچ ٹائی ہوا ۔پاکستان کی ٹیم بھارت کے خلاف ہونے والے ورلڈ ٹی ٹونٹی میچوں میں سے اب تک کوئی میچ نہیں جیت سکی۔شاہد آفریدی کی قیادت میں پاکستانی ٹیم نے بھارت کے خلاف صرف ایک ٹی ٹونٹی میچ کھیلا جس میں شکست ہوئی۔ پاکستان کرکٹ ٹیم کے ہیڈ کوچ وقار یونس نے کہا ہے کہ نیوزی لینڈ سے ہارنے کے بعد بھارتی ٹیم دباؤ میں ہے اور پورا یقین ہے کہ کل کا میچ ہم ہی جیتیں گے اور تاریخ بدل دیں گے۔ پریس بریفنگ کے دوران وقار یونس نے کہا کہ پاکستان اور بھارت کا باؤلنگ اٹیک ایک جیسا ہے جبکہ ٹورنامنٹ میں پہلا میچ جیت کر کھلاڑیوں کا مورال بلند ہے۔ محمد حفیظ سمیت تمام بلے باز اچھی فارم میں ہیں اور بنگلہ دیش کے خلاف 200 رنز بنانے پر ان کے اعتماد میں بہت اضافہ ہوا ہے اور امید ہے کہ جس جذبے کے ساتھ بنگلہ دیش کے خلاف کھیلے اگر اسی جذبے کے ساتھ کھیلے تو بھارت سے بھی جیت جائیں گے۔ان کا کہنا تھا کہ کلکتہ کی وکٹ اچھی ہے اس لئے زبردست میچ دیکھنے کو ملے گا۔ نیوزی لینڈ کے ہاتھوں پہلے میچ میں شکست کے بعد بھارتی کرکٹ ٹیم دباؤ میں ہے اور یقین ہے کہ اس دفعہ جیت ہماری ہو گی۔ کھلاڑیوں کے ذہن میں بھی یہ بات بٹھا دی ہے کہ اس بار ہمیں جیتنا ہے اورتاریخ بدلنی ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ ہمارے فاسٹ باؤلرز بھارت کی نسبت بہت بہتر ہیں جبکہ کل کے میچ کیلئے بھارتی ٹیم کی کمزوریوں پر نظرثانی کے بجائے اپنے مثبت پہلوؤں پر غور کر رہے ہیں۔ایک صحافی نے ان سے سوال کیا کہ شاہد آفریدی پریس کانفرنس کیلئے کیوں نہیں آئے تو وقار یونس مسکرا دیئے اور کہا کہ صحافی شاہد آفریدی سے بہت سخت سوالات کرتے ہیں اس لئے وہ نہیں آئے۔

مزید :

کھیل اور کھلاڑی -