کالعدم تنظیم کے مبینہ کارکن ایوب کی نظربندی کیخلاف دائر درخواست پر فیصلہ محفوظ

کالعدم تنظیم کے مبینہ کارکن ایوب کی نظربندی کیخلاف دائر درخواست پر فیصلہ ...

  

لاہور(نامہ نگار خصوصی )لاہور ہائیکورٹ نے کالعدم تنظیم کے مبینہ کارکن کی نظربندی کے خلاف دائر درخواست پر فیصلہ محفوظ کر لیا، جسٹس انوار الحق نے بصیر پور کے رہائشی محمد ایوب کی درخواست پر سماعت کی، درخواست گزار کی طرف سے مہر محمد اقبال ایڈووکیٹ نے موقف اختیار کیا کہ قانون نافذ کرنے والے اداروں نے 12مارچ 2015ء کو محمد ایوب حراست میں لیا، 6 ماہ تک وزارت داخلہ ، پولیس اور قانون نافذ کرنے والے ادارے محمو ایوب کی حراست سے انکاری رہی تاہم ہائیکورٹ سے رجوع کرنے پر وزارت داخلہ نے بتایا کہ انہوں نے ریاست مخالف سرگرمیوں کے الزام میں محمد ایوب کو کوٹ لکھپت جیل میں نظربند کر رکھا ہے، انہوں نے مزید موقف اختیار کیا کہ قانون کے مطابق کسی شہری کو 90دن سے زائد نظربند نہیں رکھا جاسکتا مگر محمد ایوب کی نظربندی متعلقہ وفاقی نظرثانی بورڈ کے اگلے اجلاس تک کی گئی ہے جو غیرقانونی اقدام ہے، انہوں نے استدعا کی کہ نظربندی کالعدم کر کے درخواست گزار کو رہا کرنے کا حکم دیا جائے،سرکاری وکیل نے موقف اختیار کیا کہ درخواست گزار کی نظربندی کے خلاف وفاقی نظرثانی بورڈ کے روبرو عرضداشت زیر التواء ہے ، جب بھی اجلاس ہوگا ، اس میں یہ معاملہ اٹھایا جائے گا، فاضل عدالت نے دلائل سننے کے بعد فیصلہ محفوظ کر لیا۔

مزید :

صفحہ آخر -