محمد عامر اور ویرات کوہلی کامقابلہ دیکھنے کا مزہ آئے گا،عمران خان

محمد عامر اور ویرات کوہلی کامقابلہ دیکھنے کا مزہ آئے گا،عمران خان
 محمد عامر اور ویرات کوہلی کامقابلہ دیکھنے کا مزہ آئے گا،عمران خان

  

اسلام آباد،نئی دہلی (مانیٹر نگ ڈیسک )قومی ٹیم کے سابق کپتان عمران خان نے کہا ہے کہ کل دباؤ کم کرنے کیلئے قومی ٹیم سے ملوں گا ،آفریدی کو کئی چیزیں بتاوں گا جو میڈ یا کے پر نہیں بتانا چاہتا۔ان کا کہنا ہے کہ پاکستان اور بھارت کامیچ مشکل ہے تاہم پاکستان کو بھارت پر نفسیاتی برتری ہے۔بنی گالا میں عمران خان نے بھارت روانگی سے پہلے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کل ٹیم کے ساتھ میٹنگ کروں گا کیونکہ پاک بھارت میچ میں بہت پریشر ہوتا ہے اور اپنے تجربے کی بنیاد پر ٹیم کو مشورے دوں گا۔ انہوں نے کہا ٹی ٹونٹی کپتان شاہد آفریدی نے رہنمائی مانگی تھی اس لئے بھارت جا رہا ہوں۔ ہماچل پردیش میں میچ بالکل نہیں کھیلنا چاہئے تھا کیونکہ ان کے وزیر اعلیٰ کا بیان مہمان نوازی کے خلاف تھا۔ کولکتہ میں ٹیم کو اچھی پذیرائی ملی اور کولکتہ کے وزیر اعلیٰ نے ملاقات کی دعوت بھی دی ہے۔ ان کا مزید کہنا تھا شیخ رشید نے ہمارے ساتھ جانا تھا لیکن وہ جلدی چلے گئے اور طاہر القادری کی بھارت میں موجودگی کا کچھ پتہ نہیں۔ پرویز مشرف کے باہر جانے کے سوال پر بات کرتے ہوئے عمران خان نے کہا میاں صاحب نے آرٹیکل 6 کا تو بڑا شور مچایا تھا اور بہت بڑے بڑے دعوے کیے تھے۔ انہوں نے اس موقع پر ایک شعر بھی سنایا نادان گر گئے سجدے میں جب وقت قیام آیا۔دوسری طرف بھارت میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے عمران خان نے کہا کہ پاک بھارت میچ میں پریشر ہوتا ہی ہے اور کھلاڑی تو کھیلتا ہی پریشر میں ہے لیکن کپتان کا کام ہے کہ وہ کھلاڑیوں کے ذہنوں سے ہار کا خوف نکالے ،اگر میں کپتان ہوتا تو کسی صورت پریشر نہ لیتااور صرف جیتنے کی حکمت عملی بناتا۔انہوں نے کہا کہ ٹی ٹوئنٹی میچ میں ہر دو گیندوں کے بعد صورتحال تبدیل ہو جاتی ہے اس لیے پریشر کو ہینڈل کرنا بہت ضروری ہے۔عمران خان نے کہا کہ دھونی اور ویرات کوہلی مشکل وقت کے بڑے کھلاڑی ہیں،محمد عامر بہترین باولر ہیں ،کل میچ میں محمد عامر اور ویرات کوہلی کا مقابلہ دیکھنے کا مزہ آئے گا۔انہوں نے کہا کہ ویرات کوہلی کو زیادہ بلے بازی کرتے ہوئے نہیں دیکھا کیونکہ ابھی میں کسی اور گیم میں مصروف ہو ں اب زیادہ کرکٹ نہیں دیکھتا،ویرات کوہلی وکٹ کی دونوں جانب اور پریشر میں کھیلتے ہیں اس لیے وہ ایک بہترین کھلاڑی ہیں۔ان کا کہنا تھا کہ شارجہ کپ شروع ہوا تو ہم سنجیدہ نہیں لیتے تھے لیکن شائقین کرکٹ نے شارجہ کپ کو سنجیدگی کے ساتھ کھیلنے پر مجبور کیا۔انہوں نے مزید کہا کہ مصبا ح الحق اب بھی بہترین کپتان ہیں۔

مزید :

صفحہ اول -