کاٹن سیکٹر کو سہولیات کی فراہمی کیلئے ٹاسک فورس کا قیام

کاٹن سیکٹر کو سہولیات کی فراہمی کیلئے ٹاسک فورس کا قیام

  

ملتا ن(کا مر س ر پو ر ٹر)ملک میں کپاس کی پیداوار میں اضافے ، کپاس کے جعلی غیر معیار ی بیج کے خاتمے ، کاٹن سیکٹر کی بہتری، برآمدات میں اضافے ،ا مدادی قیمت کے تعین اور کاٹن سیکٹر کو دیگر سیکٹرز کی طرح سہولیات کی فراہمی کیلئے ٹاسک فورس قائم کر دی گئی ہے۔ ٹاسک فورس سٹیک ہولڈرز کے مفادات(بقیہ نمبر31صفحہ7پر )

کا تحفظ کرے گی اور حکومت کو تجاویز و سفارشات پیش کر ے گی۔ پاکستان کا ٹن جنرز ایسو سی ایشن ( پی سی جی اے) کے چیئرمین شہزاد علی خان نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے بتایا کہ ٹاسک فورس میں پی سی جی اے( PCGA )، آل پاکستان ٹیکسٹائل ملز ایسوسی ایشن( APTMA)، گروورز( کاشتکار) اور کراچی کاٹن ایسو سی ایشن ) KCA )سمیت وزارتِ ٹیکسٹائل انڈسٹری کے بالتر تیب 2 ، 2 نمائندے شامل ہیں ۔ ٹاسک فورس مجموعی طور پر دس نمائندگان پر مشتمل ہے۔ کپاس کی پیداوار کا 2 کروڑ گانٹھ کپاس کا ہدف حاصل کرنے کیلئے اقدامات ، تجاویز و سفارشات مرتب کی جائیں گی اورصوبائی و وفاقی حکومت کے متعلقہ اداروں سے اقدامات کرنے کی درخواست کی جائے گی۔ ٹاسک فورس میں شامل ایسو سی ایشنز اس بات پر متفق ہیں کہ حکومت شوگر انڈسٹری کی طرح کاٹن انڈسٹری کو تحفظ دینے کیلئے اقدامات کر ے۔ شوگر سیکٹر کو تحفظ دینے کیلئے حکومت نے چینی کی امپور ٹ پر 165 فیصد ڈیوٹی عائد کر رکھی ہے جبکہ روئی ( کاٹن) اور سوتی دھاگہ ( کاٹن یارن) کی امپورٹ پر معمولی ڈیوٹی ہے۔ کاٹن ٹریڈ حکومتی پالیسیوں کے باعث تباہ حالی کاشکار ہے۔ صوبائی و وفاقی حکومت کے متعلقہ ادارے فوری طور پر قومی اسمبلی سے سیڈ اینڈ بریڈرزرائٹ ایکٹ کی منظوری کیلئے اپنا بھر پور اور مو ثر کردار ادا کریں۔ تاکہ جعلی سیڈ مافیا کا خاتمہ ہو سکے۔پی سی جی اے ٹریڈ ڈویلپمنٹ اتھارٹی آف پاکستان (TDAP) کے تعاون سے سیمینار ز کا جلد انعقادکرے گی تاکہ شعور کی بیداری اور آگاہی کی فراہمی یقینی بنائیں گے۔ پنجاب کی طرح صوبہ سندھ کے جنرز کے ٹیکسوں کے در پیش مسائل حل کئے جائیں گے۔ ٹیکسٹائل سیکٹر سے واجبات اور بقایا جات کی وصولی کیلئے چیئرمین اپٹما اور عہد یداروں سے ملاقات میں اہم پیش رفت ہوئی ہے اور جلد افہام و تفہیم سے ادائیگیوں کے معاملات حل کر لئے جائیں گے۔

مزید :

ملتان صفحہ آخر -