15مارچ2016تک97لاکھ سے زائد گانٹھ کپاس کی جننگ فیکٹریوں میں آمد

15مارچ2016تک97لاکھ سے زائد گانٹھ کپاس کی جننگ فیکٹریوں میں آمد

  

ملتا ن (کا مر س رپو رٹر)پاکستان کاٹن جنرز ایسوسی ایشن (پی سی جی اے)نے کپاس کی فیکٹریوں میں آمد کے اعدادو شمار جاری کر دیئے ہیں جسکے مطابق یک15مارچ2016تک ملک کی جننگ فیکٹریوں میں97لاکھ 48ہزار518گانٹھ کپاس آئی ۔ 15مارچ 2015تک 1کروڑ 47 (بقیہ نمبر30صفحہ7پر )

لاکھ85 ہزار 795گانٹھ کپاس فیکٹریوں میں آئی تھی۔ گذشتہ سال کی اسی مدت کے مقابلے میں50لاکھ 37ہزار277گانٹھ کپاس فیکٹریوں میں کم آئی ہے ۔ کمی کی شرح 34.07فیصد رہی ۔صوبہ پنجاب کی فیکٹریوں میں 59لاکھ 82ہزار481گانٹھ کپاس آئی ہے جو گذشتہ سال کی اسی مدت میں فیکٹریوں میں آنے والی 1 کروڑ8لاکھ 14ہزار 772گانٹھ کپاس سے 48لاکھ 32ہزار291گانٹھ کم ہے ۔ پنجاب میں کمی کی شرح 44.68فیصد رہی ۔صوبہ سندھ کی فیکٹریوں میں 37لاکھ 66ہزار 37گانٹھ کپاس فیکٹریوں میں آئی ہے ۔ گذشتہ سال 39لاکھ 71ہزار23گانٹھ کپاس فیکٹریوں میں آئی تھی ۔ 15مارچ2016تک فیکٹریوں میں آنے والی کپاس سے 97 لاکھ 37ہزار363گانٹھ روئی تیار کی گئی ۔ 37جننگ فیکٹریاں آپریشنل ہیں ۔ ایکسپورٹرز نے رواں سیزن میں 3 لاکھ 61ہزار241گانٹھ روئی خرید کی ہے جبکہ ٹیکسٹائل سیکٹرنے 87لاکھ 45ہزار514گانٹھ روئی خرید کی ہے ۔ ٹریڈنگ کارپوریشن آف پاکستان(TCP)نے کاٹن سیزن 2015-16میں خریداری نہیں کی ہے ۔ صوبہ پنجاب میں31جننگ فیکٹریاں آپریشنل ہیں اور59لاکھ73ہزار576گانٹھ روئی تیار کی گئی ہے ۔15مارچ2016تک ضلع ملتان میں 1 لاکھ29 ہزار676گانٹھ کپاس، ضلع لودھراں میں 97ہزار437گانٹھ کپاس، ضلع خانیوال میں 4لاکھ 4ہزار 570 گانٹھ کپاس ، ضلع مظفر گڑھ میں2 لاکھ 67ہزار 377، ضلع وہاڑی میں3 لاکھ 11ہزار450گانٹھ کپاس ، ضلع ساہیوال میں 2 لاکھ 55ہزار841گانٹھ کپاس ، ضلع رحیم یار خان میں11 لاکھ 14ہز ار280گانٹھ ضلع بہاولپور میں 7لاکھ42ہزار698گانٹھ کپاس، ضلع بہاولنگر میں 9 لاکھ37ہزار660گانٹھ کپاس فیکٹریوں میں آئی ہے۔ضلع سانگھڑ میں 13لاکھ 46ہزار 564اور ضلع حیدرآباد میں 2 لاکھ 50 ہزار 607 گانٹھ کپاس فیکٹریوں میں آئی ہے۔ غیر فروخت شدہ سٹاک 6لاکھ 41ہزار763گانٹھ کپاس اور روئی موجود ہے ۔

مزید :

ملتان صفحہ آخر -