25 ہزار روپے قرض کے عوض 10 سالہ لڑکی کی شادی، رخصتی پر چیخ و پکار ہوئی تو پولیس پہنچ گئی، دولہا کی عمر کتنی تھی؟ جان کرآپ بھی کانوں کو ہاتھ لگائیں گے

25 ہزار روپے قرض کے عوض 10 سالہ لڑکی کی شادی، رخصتی پر چیخ و پکار ہوئی تو پولیس ...
25 ہزار روپے قرض کے عوض 10 سالہ لڑکی کی شادی، رخصتی پر چیخ و پکار ہوئی تو پولیس پہنچ گئی، دولہا کی عمر کتنی تھی؟ جان کرآپ بھی کانوں کو ہاتھ لگائیں گے

روزنامہ پاکستان کی اینڈرائیڈ موبائل ایپ ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

گھوٹکی (ویب ڈیسک)صوبہ سندھ کے ضلع گھوٹکی کی تحصیل اوباڑو میں قرض کے بدلے ایک شخص نے اپنی 10 سالہ بیٹی کا نکاح 30 سالہ شخص سے کروا دیا۔

یوٹیوب چینل سبسکرائب کرنے کیلئے یہاں کلک کریں

پولیس کے مطابق واقعہ گائوں حسین بھٹو میں پیش آیا جہاں عطا محمد بھٹو نامی ایک شخص نے ایک سال قبل ایک بااثر شخص اللہ جڑیو سے 25 ہزار روپےکا قرض سود پر لیا تھا، جو بڑھ کر ڈیڑھ لاکھ تک جا پہنچا۔قرض ادا نہ کرنے پر عطا محمد نے اپنی 10 سالہ بیٹی کا نکاح اللہ جڑیو کے بیٹے سے کرادیا تاہم رخصتی کےوقت بچی کی چیخ وپکار پر اہل علاقہ نے پولیس کو بلالیا۔ایس ایچ او امام دین چانڈیو کا کہنا ہے کہ بچی کو تحویل میں لے لیا گیا ہے جسے آج عدالت میں پیش کیا جائے گا۔

واضح رہے کہ اندرون سندھ کم عمر لڑکیوں کی بڑی عمر کے مردوں سے شادیوں کے واقعات اکثر وبیشتر سامنے آتے رہتے ہیں، جن پر پولیس کی جانب سے کارروائی بھی کی جاتی ہے۔اس سے قبل رواں ماہ 10 مارچ کو بھی سندھ کے ضلع تھرپارکر میں پولیس نے کارروائی کرتے ہوئے ایک 13 سالہ دلہن بازیاب کروائی تھی، جس کی شادی 60 سالہ شخص سے کی گئی تھی۔

پولیس کے مطابق واقعہ تھرپارکر کے گائوں ڈھاکلو میں پیش آیا، جہاں ایک شخص نے مبینہ طور پر پیسوں کے عوض اپنی 13 سالہ بیٹی کی شادی 60 سالہ شخص سے کردی تھی۔

مزید : علاقائی /سندھ /گھوٹکی