کرسٹل مال کے سامنے موت کا راستہ لوگوں کا سٹیزن پورٹل پر جانیکا فیصلہ

کرسٹل مال کے سامنے موت کا راستہ لوگوں کا سٹیزن پورٹل پر جانیکا فیصلہ

  

ملتان(نمائندہ خصوصی)ضلعی انتظامیہ،ٹریفک پولیس اورملتان ڈویلپمنٹ اتھارٹی کی طرف سے کرسٹل مال پلازہ جیسے پلازوں کونوازنے کے لئے بوسن روڈکوموت کی روڈبنانے کے معاملہ کوشہریوں نے وزیراعظم پاکستان کے نوٹس میں لانے کافیصلہ کیاہے وزیراعظم شکایات سیل کوغیرضروری اورغیرقانونی یوٹرن کے خلاف تفصیلات بھجوائی جائیں گئی۔تفصیل کے مطابق چونگی نمبر9سے لے کر(بقیہ نمبر7صفحہ12پر)

بہاؤالدین زکریایونیورسٹی تک 6لین روڈتعمیرکی گئی تھی مین روڈپرٹریفک کوبغیررکاوٹ رواں دواں رکھنے کے لئے روڈکے دونوں اطراف سروس روڈزبھی بنائے گئے تھے ایک ارب روپے کی لاگت سے تعمیرکی جانے والی اس ساڑھے سات کلومیٹرروڈ میں صرف 5یوٹرن دئیے گئے تھے جن کی تعدادآج ایک درجن سے زائد ہوگئی ہے جس کی وجہ سے روڈپرٹریفک ہجوم اورحادثات روزکامعمول ہے تاہم ملتان بھرمیں تجاوزات کے خلاف آپریشن کرنے والے محکموں نے اس مصروف ترین روڈپرمجرمانہ چشم پوشی کی پالیسی اختیارکررکھی ہے۔حال ہی میں بوسن روڈپرکرسٹل مال پلازہ کی انتطامیہ نے بوسن روڈپرموجودتمام پلازہ مالکان کوپیچھے چھوڑدیاہے نہ صرف پلازہ کے سامنے بوسن روڈکے ڈیوائیڈرکوختم کرکے ضلعی انتظامیہ،ٹریفک پولیس اورایم ڈی اے انتظامیہ کی آشیربادسے یوٹرن بنالیاہے بلکہ سروس روڈسمیت مین بوسن روڈتک پلازہ میں خریداری کے لئے آنے والے موٹرسائیکل گاڑیوں کی پارکنگ بھی معمول بن گئی ہے۔بے ہنگم پارکنگ اورغیرضروری یوٹرن کی وجہ سے آئے روزہونے والے حادثات کی وجہ سے شہریوں نے کرسٹل مال کے سامنے والے یوٹرن کی وجہ سے بوسن روڈکانام موت کی روڈرکھادیاہے۔کوئی دن ایسانہیں جب یہاں حادثہ رونمانہ ہو اور1122والے زخمیوں کونہ اٹھاکرجارہے ہوں۔بتایاجاتاہے کہ اس خطرناک صورت حال پرضلعی انتظامیہ اوردیگرمتعلقہ محکموں کی پرسرارخاموشی پرشہریوں نے وزیراعظم سٹیزن پورٹل پربوسن روڈکی صورت حال اورہونے والے حادثات کی تفصیلات بھجوانے کافیصلہ کیاہے تاکہ بوسن روڈکواس کے نقشہ کے مطابق بحال کروایاسکے اورروڈسے پلاز ہ مالکان کی اجارہ داری ختم ہوسکے۔

مزید :

ملتان صفحہ آخر -