جلد اور معیاری انصاف کی فراہمی کیلئے جدید طریقے اپنانا ہونگے، چیف جسٹس لاہور ہائیکورٹ

جلد اور معیاری انصاف کی فراہمی کیلئے جدید طریقے اپنانا ہونگے، چیف جسٹس لاہور ...

  

لاہور(نامہ نگارخصوصی)چیف جسٹس لاہور ہائیکورٹ مسٹرجسٹس مامون رشید شیخ نے اپنی ریٹائرمنٹ کے موقع پر اپنے اعزاز میں ہونیوالے فل کورٹ ریفر نس سے خطاب کرتے ہوئے کہا وکلاء عدالتی نظام کی ریڑھ کی ہڈی ہیں،جوآئین و قانون کی بالادستی میں اہم کردار ہے،وکلاء کی مثبت معاونت کے بغیر سا ئلین کو بروقت و معیاری انصاف فراہم نہیں کیا جاسکتا، امید ہے وکلاء مستقبل میں بھی عدلیہ کے شانہ بشانہ چلتے (بقیہ نمبر56صفحہ12پر)

ہوئے انصاف کا بول بالا کریں گے۔ججوں پر مقدمات کا بڑا بوجھ ہے، روایتی انداز سے اتنے مقدمات کے فیصلے ممکن نہیں، ہمیں جدید اور متبادل طریقوں کو اپنانا ہوگا،اے ڈی آر سنٹرز اور ماڈل کورٹس کی بدولت مقدمات کے بڑی تعداد میں فیصلے ہوئے،ہمیں جدید طریقوں کو اپناکرجلد اور معیاری انصاف کی فراہمی کے خواب کو شرمندہ تعبیر کرنا ہے، فل کورٹ میں موجود تمام ججوں اور وکلاء برداری کا ممنون ہوں،میری کامیابیوں میں میرے مرحوم والد اور بہت سارے سینئروکلاء کا بڑا کردار ہے،میری فیملی نے بطور وکیل اور بطور جج ہمیشہ مجھے سپورٹ کیا،چیف جسٹس کا منصب سنبھالا تو صرف ایک ویژن تھا سائلین کو جلد اور معیاری انصاف کی فراہمی یقینی بنائی جائے،مختصر عرصہ کیلئے اس عہدہ پررہا،اس کے باوجود وکلاء، ججوں اور سائلین کو ہر ممکن سہولیات کی فراہمی کیلئے اقدامات اٹھائے،ہم نے ادارے اور ججوں کو مضبوط بنانے کیلئے کام کیا،اس موقع پرنامزد چیف جسٹس لاہورہائی کورٹ مسٹر جسٹس محمدقاسم خان نے فل کورٹ ریفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا چیف جسٹس مامون رشید شیخ نے مختصر عرصہ میں صوبے کی عدلیہ کیلئے بہترین اقدامات کئے، بطور جج بہترین فیصلے دئیے جوعدالتی نظیر کی حیثیت بھی رکھتے ہیں،چیف جسٹس کے معیاری انصاف کی فراہمی کیلئے اٹھائے جانیوالے اقدامات کا تسلسل جاری رہے گا،فل کورٹ ریفرنس میں عدالت عالیہ کے تمام ججوں،لاء افسروں او ر وکلاء نمائندہ تنظیموں کے رہنماؤں نے شرکت کی،پاکستان بار کونسل کے وائس چیئرمین،لاہورہائی کورٹ بارایسوسی ایشن کے لاہور،ملتان،بہاولپوراور راو لپنڈ ی کے صدور کے علاوہ پنجاب بارکونسل کے وائس چیئرمین،پراسیکیوٹر جنرل پنجاب،قائم مقام ایڈووکیٹ جنرل پنجاب،ایڈیشنل اٹارنی جنرل پاکستان اور ایڈیشنل اٹارنی جنرل پاکستان نے بھی فل کورٹ ریفرنس سے خطاب کیا اور جسٹس مامون رشید شیخ کی بطور جج اور چیف جسٹس کی خدمات کو سراہنے سمیت نئے آنیوالے چیف جسٹس مسٹر جسٹس محمد قاسم خان سے انصاف کی فراہمی اور قانون کی بالادستی کیلئے مثبت توقعات کا اظہارکیا،دریں اثناء بعض وکلاء کی طرف سے کرونا وائرس کے خدشات کے پیش نظر فل کور ٹ ریفرنس کے انعقاد پر حیرت کا اظہار کیا گیا، وکلاء کا کہناتھاایک طرف غیر متعلقہ افرادحتیٰ کہ غیر متعلقہ وکلا ء کا داخلہ بھی عدالتوں میں بند ہے،دوسری طرف ایک ہی کمرہ میں لاہورہائی کورٹ کے تمام ججوں،لاء افسروں،وکلاء نمائندوں اور عدالتی افسروں کو فل کور ٹ ریفرنس میں اکٹھاکیا گیا،دوسری طرف لاہورہائی کورٹ انتظامیہ کا کہناہے چیف جسٹس مامون رشید شیخ کی ریٹائرمنٹ کے موقع پر ان کے اعزاز میں فل کورٹ ریفرنس کاعدالت عالیہ کی روایات کے مطابق انعقاد کیا گیا۔

چیف جسٹس لاہورہائیکورٹ

مزید :

ملتان صفحہ آخر -صفحہ آخر -