نادرا، پاسپورٹ دفاتر میں بائیو میٹرک مشین سے کرونا وائرس پھیلنے کا خطرہ

  نادرا، پاسپورٹ دفاتر میں بائیو میٹرک مشین سے کرونا وائرس پھیلنے کا خطرہ

  

لاہور(نیوز رپورٹر)نیشنل ڈیٹا بیس اینڈ رجسٹریشن اتھارٹی (نادرا) اور پاسپورٹ دفاتر میں بائیو میٹرک مشین کے جاری استعمال سے کرونا وائرس پھیلنے کا امکان بڑھ گیا،ملازمین خوف ہراس میں مبتلا ہو گئے، ملک بھر کے تعلیمی اداروں سمیت اہم سرکاری محکمے بند کر ئیے گئے مگر نادرا اور پاسپورٹس دفاتر کے ملازمین کے لیے کوئی خاطر خواہ انتظام نہ ہونے پراہلکاروں کی افسروں کو بددعائیں۔ تفصیلات کے مطابق نادرا اور پاسپورٹ دفاتر میں ملازمین کو دستانے اور ماسک فراہم کردئیے گئے جو کرونا وائرس سے بچنے کیلئے ناکافی ہیں۔ذرائع کے مطابق سرکاری ملازمین کی بائیو میٹرک حاضری کو ختم کر دیا گیا جبکہ نادرا اور پاسپورٹ کے دفاتر میں آنے والے سائلین کو ایک ہی بائیومیٹرک مشین پر فنگر پرنٹ دینا پڑتے ہیں جو وائرس کو پھیلانے کا موجب بن سکتے ہیں۔ذرائع کے مطابق روزانہ کی بنیاد پر ہزاروں سائلین نادرا اور پاسپورٹس دفاتر کا رخ کرتے ہیں جہاں داخلے سے قبل سینیٹائزر سے صرف ہاتھ صاف کروائے جاتے ہیں جو کہ ناکافی ہیں کیونکہ سکیورٹی پر مامور افراد لاعلم ہوتے ہیں کہ وہاں آنے والا شخص کرونا وائرس میں مبتلا ہے یا نہیں۔ ذرائع کے مطابق نادرا اور پاسپورٹ دفاترکے ملازمین لمبی رخصت کے چکروں میں پڑ گئے،نادرا سمیت پاسپورٹس دفاتر کے ملازمین نے وزیراعظم پاکستان اور وزیر داخلہ سے مطالبہ کیا ہے کہ عوام اور ملازمین کو اس وباء سے محفوظ رکھنے کیلئے دفتر کو عارضی طور پر بند کر دیا جائے۔

خطرہ

مزید :

صفحہ اول -