کراچی کے نواح میں غیر آباد وسیع رہائشی کمپلیکس کو قرنطینہ مرکز بنانے کی تیاریاں

کراچی کے نواح میں غیر آباد وسیع رہائشی کمپلیکس کو قرنطینہ مرکز بنانے کی ...

  

کراچی(سٹاف رپورٹر) حکومت سندھ نے سکھر کے قرنطینہ مرکز کی طرز پر کراچی کے نواح میں 6000 کمروں پر مشتمل قرنطینہ سینٹر بنا نے کی تیاریاں شروع کردی ہیں۔تقریباً پانچ سال سے تیار غیر آباد رہائشی عمارات پر مشتمل ایک بہت بڑے کمپلیکس کو قرنطینہ مرکز بنانے کی تیاریوں کا آغاز کر دیا گیا ہے، رہائشی کمپلیکس کی چند دورافتادہ عمارتوں کو چین کے شہر ووہان کے عارضی ہسپتالوں کی طرزمیں بھی تبدیل کیا جا سکتا ہے۔کراچی کے قرنطینہ مرکز میں ابتدائی طور پر 400 کمروں کو آیئسولیشن رومز میں تبدیل کیا جا رہا ہے، بجلی پانی و دیگر سہولیات کی فرا ہمی شروع کردی گئی ہے اور جلد ہی محکمہ صحت کی ٹیم طبی سازوسامان کیساتھ قرنطینہ مرکز کا کنٹرول سنبھال لے گی۔کراچی کے علاوہ شہر سے تقر یباً 80 کلومیٹر کے فاصلے پر نوری آباد کے علاقے میں بھی 2000 کمروں پر مشتمل آئسولیشن یا قرنطینہ مرکز قائم کیا جا رہا ہے جہاں پر حیدر آ باد اور اور زیریں سندھ کے علاقوں سے کورونا کے مریضوں کو لاکر رکھا جائے گا۔بدھ کے روز صوبائی وزیر تعلیم سعید غنی اور کمشنر کراچی افتخار شلو ا نی نے کراچی کے نواحی علاقے میں قائم کیے جانیوالے قرنطینہ مرکز کا دورہ کیا۔اس موقع پر بات کرتے ہوئے انہوں نے بتایا اس قرنطینہ مرکز کو سکھر کے آئسولیشن سینٹر کی طرز پر قائم کیا جا رہا ہے جہاں پر 6000 لوگوں کو تہناہی میں رکھنے کی گنجائش پیدا کی جارہی ہے۔ کراچی کے نواحی علاقے میں قرنطینہ مرکز کے قیام کا مقصد بدترین حالات سے نمٹنے کی تیاری ہے، ابتدائی طور پر پر400 کمرے مشتبہ مریضوں کیلئے تیار کرلیے گئے ہیں، وہاں پر موجود ایک ہسپتال کی بلڈنگ کو بھی فعال کیا جا رہا ہے اور محکمہ صحت کی ٹیم کل ہسپتال اور آئسولیشن ایریا میں سہولیات کی فراہمی شروع کر دے گی۔

کراچی قرنطینہ اسد

مزید :

اہم خبریں -