شنگھائی ، جہاز سے بھی تیز چلنے والی ٹرین کا تجربہ

شنگھائی ، جہاز سے بھی تیز چلنے والی ٹرین کا تجربہ
شنگھائی ، جہاز سے بھی تیز چلنے والی ٹرین کا تجربہ

  

شنگھائی (نیوز ڈیسک) چین کی ”ساﺅتھ ویسٹ جیاﺅ تونگ یونیورسٹی“ میں سائنسدانوں نے ایک انتہائی تیز رفتار ٹرین کے تجربے کے لئے پروٹوٹائٹ پلیٹ فارم بنایا ہے۔ منصوبے کے سربراہ ڈاکٹر ”ڈینگ زی گانگ“ کا کہنا ہے کہ یہ ٹرین 2900کلو میٹر فی گھنٹہ (یا 1800میل فی گھنٹہ) کی رفتار سے سفر کرسکتی ہے جو کہ کمرشل جہاز کی رفتار سے تین گنا تیز ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ ایسا ہوا کی مزاحمت پر قابو پانے سے ممکن ہوا ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ بنائے جانے والی سرنگ میں ان کی ٹیم ہوا کا دباﺅ 10 گنا کمکرنے میں کامیاب ہوگئی ہے، اس طرح ہوا کی مزاحمت پر قابو پانے کے لئے درکار توانائی بے حد کم ہوگئی ہے۔ ڈاکٹر ڈینگ کا کہنا ہے کہ ابھی پلیٹ فام کے حجم کے باعث ٹرین کی رفتار محدود ہے لیکن لمبے فاصلے پر یہ 2900کلومیٹر فی گھنٹہ لگ جانے کی صلاحیت رکھتی ہے۔ یاد رہے کہ اس تیز ترین ٹرین کا ریکارڈ بھی صرف 581 کلو میٹر فی گھنٹہ ہے۔ اگرچین کا یہ منصوبہ کامیاب ہوگیا تو یقیناً یہ اس شعبے میں انقلاب برپا کردے گا۔

 

مزید : صفحہ آخر