مودی کی متوقع کابینہ ’مجرم ‘ ہوگی

مودی کی متوقع کابینہ ’مجرم ‘ ہوگی
مودی کی متوقع کابینہ ’مجرم ‘ ہوگی

  

نئی دہلی(نیوز ڈیسک)بھارتی میڈیانے روزنامہ پاکستان کی خبر کی تصدیق کر دی اور کہاہے کہ  اگلی متوقع بھارتی کابینہ میں مجرموں کی بھرمارہوسکتی ہے ،بھارتی میڈیارپورٹس کے مطابق بھارتیہ جنتا پارٹی کے اہم لیڈر نریندرا مودی کی جانب سے انتخابات میں کئے گئے شفافیت اور کرپشن سے پاک کرنے کے وعدوں کے باوجود بھارت کی اگلی کابینہ میں اس بار اراکین کی ریکارڈ تعداد ایسے افراد پر مشتمل ہوگی جن پر سنگین جرائم کے الزامات ہیں،مودی نے وعدہ کیا تھا کہ وہ ایک شفاف اور مثر حکومت قائم کرکے سست معیشت کو بہتر کریں گے۔ انہوں نے اکثریت حاصل کرلی ہے اور اب وہ جلد اپنی حکومت بنائیں گے۔ لیکن انتخابات جیتنے کے بعد ہندو قوم پرست بی جے پی پارٹی کی نئی کابینہ کے لوگوں پر کئی اہم جرائم کے الزامات ہیں جن میں قتل، اغوا، رہزنی اور فرقہ وارانہ یا نسلی فسادات پھیلانے کا جرائم شامل ہیں۔ میڈیارپورٹس کے مطابق  ایوانِ زیریں کے 34 فیصد اراکین پر جرم کے الزامات ہیں ۔ یہ تنظیم گڈ گورننس اور صاف حکومت کی وکالت کرتی ہے اور اسی کیلئے تحقیقی کرتی ہے۔ اس کی رپورٹ کےمطابق 543 اراکین پر مشتمل اسمبلی  کے کئی اراکین پر سنگین جرائم کے الزامات ہیں۔ بی جے پی کے نو میں سے چار اراکین پر قتل کے مقدمات ہیں، جبکہ سترہ میں سے دس پارلیمانی اراکین پر اقدامِ قتل کے الزامات ہیں۔ تجزیہ کاروں کے مطابق روایتی طور پر ووٹروں کو مجرمانہ سرگرمیوں والے اراکین سے کوئی خاص مطلب نہیں دوسری جانب ملک میں کروڑوں افراد نے مذہبی اور ذات پات کی بنیاد پر ووٹ ڈالے ہیں۔ یا درہے کہ کچھ عرصہ قبل ہی خبر دی گئی تھی کہ بھارتی پارلیمان مجرموں کی پناہ گاہ بن چکی ہے اور کہاتھاکہ وقت کے ساتھ ساتھ مجرموں میں اضافہ ہورہاہے ۔

بھارتی صدر نے لوک سبھا تحلیل کردی ، تفصیلات کیلئے یہاں کلک کریں ۔

مزید : بین الاقوامی