نوشہرہ میں سکیورٹی فورسز پر حملہ، دہشتگرد تحریک طالبان افغانستان کی تنظیم حزب الاحرار نے بھیجا:ڈی پی او

نوشہرہ میں سکیورٹی فورسز پر حملہ، دہشتگرد تحریک طالبان افغانستان کی تنظیم ...
نوشہرہ میں سکیورٹی فورسز پر حملہ، دہشتگرد تحریک طالبان افغانستان کی تنظیم حزب الاحرار نے بھیجا:ڈی پی او

  

نوشہرہ (اے پی پی) نوشہرہ میں سکیورٹی فورسز پر حملہ کرنے والے خود کش حملہ آور کے بارے میں انکشاف ہو اہے کہ اسے تحریک طالبان افغانستان کی ذیلی تنظیم حزب الاحرار نے بھیجا تھا۔ 

تفصیلات کے مطابق  گریژن ہیڈ کواٹرز نوشہرہ میں سکیورٹی فورس ، پولیس اور حساس اداروں کے سربراہان کا اعلیٰ سطحی اجلاس ہوا جس میں اہم نکات پر بحث کی گئی۔ گزشتہ روز ایف سی ٹل سکاﺅٹ کے کانوائے کو کچہری چوک پر خود کش حملہ آور نے نشانہ بنایا تھا جس میں 2 سیکورٹی اہلکار شہید  اور 6 سیکورٹی اہلکاروں سمیت12 افراد زخمی ہوئے تھے۔سکیورٹی فورسز ذرائع کے مطابق گاڑی پاک فوج نے خصوصی طور پر تیار کی تھی اس لئے خود کش حملے کے باوجود تمام اہلکار بڑی حد تک محفوظ رہے ۔

یوٹیوب چینل سبسکرائب کرنے کیلئے یہاں کلک کریں

 ڈی پی او نوشہرہ شہزاد ندیم بخاری نے میڈیا کو بتایا کہ حملہ آور کو تحریک طالبان افغانستان کی تنظیم حز ب الاحرار نے بھیجا اور اس کی ذمہ داری قبول کرلی ہے ، مذکورہ تنظیم نے خود کش حملہ کی دو تصاویر جاری کی ہیں ، جس کا نام روح الامین عرف عثمان ساکن بٹی گوٹ ، ننگر ہار افغانستان ، عمر چودہ سے پندرہ سال ہے۔

انہوں نے کہا کہ خود کش حملہ آور کے سہولت کاروں کیخلاف تیزی سے تفتیش جاری ہے ، دریں اثناگریژن ہیڈکوارٹر نوشہرہ میں بریگیڈئیر حمید کی صدارت میں اعلیٰ سطحی اجلاس ہوا جس میں سٹیشن کمانڈر نوشہرہ بریگیڈئر نذیر حسین خان ، سکیورٹی ایجنسیوں کے سربراہان سمیت ڈی پی او نوشہرہ نے شرکت کی اور واقعہ کا تمام پہلوﺅں سے جائزہ لیا گیا ۔

اس موقع پر بریگیڈئر نذیر حسین خان نے کہا کہ نوشہرہ کچہری چوک میں خود کش حملے کے حوالے سے خود کش بمبار کے سہولت کاروں کے خلاف تفتیش کا آغاز کر دیا ہے ، جیو فنسنگ کے ذریعے اصل ملزمان تک بہت جلد پہنچیں گے ، انہوں نے کہا کہ ہم مزید چیک پوسٹس قائم کریں گے اور دہشتگردوں کو کسی طور پر منظم ہونے نہیں دیں گے۔

خیال رہے کہ تحریک طالبان افغانستان کی جانب سے پاکستان میں عدم مداخلت کی پالیسی روا رکھی گئی ہے جبکہ حکومت پاکستان کے بھی ہمیشہ ہی افغان طالبان کے ساتھ اچھے تعلقات رہے ہیں لیکن ٹی ٹی اے کی ذیلی تنظیم کا پاکستان کے سکیورٹی اداروں پر حملہ تشویشناک ہے۔

مزید : علاقائی /خیبرپختون خواہ /نوشہرہ