پاکستان ہاکی میں کام نہیں، باتیں ہورہی ہیں، سلمان اکبر

  پاکستان ہاکی میں کام نہیں، باتیں ہورہی ہیں، سلمان اکبر

  

اسلام آباد (این این آئی)پاکستان ہاکی ٹیم کیسابق کپتان گول کیپر سلمان اکبر نے کہا ہے کہ پاکستان ہاکی میں کام نظر نہیں آرہا، بس باتیں ہورہی ہیں، ہاکی فیڈریشن کے دفاتر میں پروفیشنل لوگ نہیں۔2010 میں چین میں کھیلی گئی ایشین گیمز کی فاتح ٹیم کے ہیرو سلمان اکبر نے ایک انٹرویومیں کہا کہ سماجی فاصلہ رکھ کر ہاکی مقابلوں کا تصور بھی نہیں کیا جاسکتا۔انہوں نے کہا کہ فاصلہ رکھ کر ہاکی مقابلے ہوئے تو بہت گول پڑیں گے اور کھیل ویڈیو گیم لگے گا۔انہوں نے کہا کہ ایف آئی ایچ کو پروٹوکول کیساتھ مقابلوں میں ہاکی کے سارے قوانین تبدیل کرنا ہوں گے، پروٹوکول کے مطابق ٹریننگ میں بھی شروع میں مشکلات ہوئی تھیں۔سلمان اکبر نے کہا کہ پاکستان ہاکی فیڈریشن پلیئرزکی آن لائن میٹنگ کرائے، ضروری نہیں سابق پلیئر ہی ہاکی کو چلائیں، کارپوریٹ کلچر لانا ضروری ہے38 سالہ سلمان اکبر نے کہا کہ ایک لیگ کروا لینا مسائل کاحل نہیں،کھلاڑیوں کو پورا سال مصروف رکھنا ضروری ہے، کچھ لوگ اپنی اجاراداری قائم رکھنے کیلئے درست اقدامات نہیں لے رہے۔انہوں نے کہا کہ پاکستان ہاکی نے ہمیشہ غیرملکی کوچزکیساتھ اچھا پرفارم کیا، مقامی کوچز پاکستان ہاکی کو سترہویں پوزیشن پر لے آئے۔سلمان اکبر نے کہا کہ یہی حالات رہے تو پاکستان ہاکی بیسویں نمبر پر بھی آجائیگی، ہاکی پلیئرز کے لیے پورے سال کا کلینڈر بنایا جائے۔

مزید :

کھیل اور کھلاڑی -