مطالبات تسلیم‘پیف سکولز اتحاد کا آج دھرنا منسوخ

  مطالبات تسلیم‘پیف سکولز اتحاد کا آج دھرنا منسوخ

  

ملتان(سٹاف رپورٹر) صوبائی وزیر تعلیم نے مطالبات تسلیم کرلئے‘پیف سکولز اتحاد پنجاب نے آج19مئی کو پنجاب اسمبلی کے سامنے دوبارہ دھرنے کی کال واپس لے لی۔بتایا گیا ہے کہ صوبائی وزیر تعلیم پنجاب مراد راس نے محکمہ تعلیم سکولز پنجاب کے اکاؤنٹ سے گزشتہ روز ٹویٹ جاری کیا جس میں انہوں نے پیف سکولز اتحاد کے مطالبات تسلیم کرنے کا اعلان کر دیاجس کے مطابق جوائنٹ ایکشن کمیٹی پیف سکولز اتحاد پنجاب کے نمائندوں کی وزیر تعلیم مراد راس کے ساتھ فیصلہ کن ملاقات ہوئی جس میں ایم ڈی پنجاب ایجوکیشن فاؤنڈیشن اور چیئرمین فیڈریشن آف(بقیہ نمبر26صفحہ6پر)

رجسٹرڈ سکولز پنجاب فرید خان بنگش بھی شریک ہوئے‘ صوبائی وزیر مراد راس نے تسلیم کیا کہ کرونا وائرس کی وباکے مسئلے کے باعث پیف و پیما پارٹنرز کو ادائیگیوں میں تاخیرہوئی۔اگلے 2ہفتوں کے دوران پیف پارٹنرز کو 50فیصد ادائیگیاں کر دی جائیں گی‘ پیما کو فوری ادائیگیوں کا حکم دیا گیا ہے جبکہ پیف اور پیما کی جانب سے جاری کرد ہ سرکلرز کی حتمی تاریخ میں کرونا وائرس کے مسئلے کی بنا پر مزید 6ماہ کی مہلت کا نوٹیفکیشن جاری کیاجائے گا‘ پیف سکولز کے مسائل کے حل کے لئے کمیٹی تشکیل دی جائے گی جو عید الفطر کے بعد کام کرے گی۔واضح رہے کہ پیف سکولز کو کئی ماہ سے عدم ادائیگیوں کے مسئلے کومیڈیانے اجاگر کیا اور خفیہ اداروں نے بھی اس بارے میں رپورٹس دیں‘ اس معاملے میں وزیر اعلی ٰ پنجاب سردار عثمان بزدار‘سپیکر پنجاب اسمبلی چوہدری پرویز الٰہی اور صوبائی وزیر قانون راجہ بشارت کی بھی انٹریاں ہوئیں کیونکہ پیف سکولز اتحاد نے وزیر اعلی ٰ ہاؤس تونسہ کے بعد پنجاب اسمبلی کے باہر بھی دھرنا دیا‘تونسہ میں تقریباً100اور لاہور میں 200پیف سکولز مالکان و اساتذہ کے خلاف مقدمات درج ہوئے جس سے حکومت کی پوزیشن خراب ہوئی‘ واضح رہے کہ حکومت کے اہم اتحادی سپیکر چوہدری پرویز الٰہی نے اپنے وزارت اعلی ٰ کے دور میں پیف سکولز کا منصوبہ شروع کیا تھا اور موجودہ صورتحال پر انہیں از حد تشویش تھی اور وہ مضطرب نظر آئے۔اگلے مرحلے میں یہ معاملہ وزیر اعظم عمران خان تک جارہا تھا۔

مطالبات تسلیم

مزید :

ملتان صفحہ آخر -