بی آر ٹی کی تکمیل کیلئے مزید کتنا وقت درکار ہے؟ کے پی کے حکومت نے بتادیا

بی آر ٹی کی تکمیل کیلئے مزید کتنا وقت درکار ہے؟ کے پی کے حکومت نے بتادیا
بی آر ٹی کی تکمیل کیلئے مزید کتنا وقت درکار ہے؟ کے پی کے حکومت نے بتادیا

  

پشاور(ڈیلی پاکستان آن لائن) پشاور میں میٹرو بس پر سفر کرنے والوں کے خواب کی تکمیل میں ابھی بھی وقت باقی ہے۔ کے پی کے حکومت کے مطابق بی آرٹی کی تکمیل کیلئے مزید ایک ماہ چاہیے۔

ڈان اخبار کے مطابق تعمیری صنعت کھولنے کے معاملے پر حکومت خیبر پختونخوا نے وزیراعظم کو آگاہ کیا کہ منصوبے (32 کلیمٹر طویل روڈ، انڈرپاسز اور بالائی گزرگاہوں) کا تمام سول ورک مکمل کرلیا گیا ہے لیکن کورونا وائرس کے باعث اس میں مزید ایک ماہ کی تاخیر ہے۔ جس پروزیراعظم عمران خان نے بس ریپڈ ٹرانسپورٹ (بی آر ٹی) سسٹم کو مزید کسی تاخیر کے بغیر آئندہ ماہ مکمل کرنے کا حکم دے دیا۔

خیبر پختونخوا کے وزیراطلاعات شوکت یوسف زئی نے ڈان کو بتایا کہ وزیراعظم کو بی آر ٹی منصوبے کی اپڈیٹ دی گئی اور انہوں نے سول ورک کی 100 فیصد تکمیل پر اطمینان کا اظہار کیا۔

منصوبے کی لاگت کے بارے میں صوبائی وزیراطلاعات نے بتایا کہ میڈیا میں اس حوالے سے مختلف اعداد و شمار بتائے جاتے ہیں لیکن اس کی مجموعی لاگت 37 ارب روپے ہے اور ’طوالت اور دیگر پہلوؤں کے لحاظ سے بی آر ٹی ملک کی تمام میٹروز میں سب سے سستا منصوبہ ہے‘۔

انہوں نے کہا کچھ میڈیا رپورٹس میں اس کی لاگت 70 ارب روپے اور کچھ میں 100 ارب روپے بتائی گئی جو بالکل غلط ہے، بی آر ٹی کی حقیقی لاگت 29 ارب روپے تھی اور بعد میں کچھ اضافی کاموں کو شامل کرنے کی وجہ سے یہ 37 ارب روپے ہوگئی تھی۔

ان کا کہنا تھا کہ منصوبے کی تعمیر کرنے والی پشاور ڈیولپمنٹ اتھارٹی (پی ڈی اے) نے روڈ نیٹ ورک میں 66 کلومیٹر روڈ کو شامل کیا اور کچھ کمرشل پلازے بھی تعمیر کررہی ہے جو بی آر ٹی کا حصہ نہیں تھے لیکن بدقسمیت سے اسے بھی بی آر ٹی کا حصہ سمجھا جاتا ہے جو غلط ہے۔ انہوں نے کہا منصوبے کے کنسلٹنٹ غیر ملکی تھے جو وبا پھوٹتے ہی گھروں کو چلے گئے اب ان کا انتظار ہے اور امید ہے کہ کچھ ہی روز میں کام بحال ہوجائے گا۔

خیال رہے کہ پشاور بس منصوبہ اکتوبر 2017 میں شروع کیا گیا تھا جسے اپریل 2018 تک پایہ تکمیل تک پہنچنا تھا لیکن تاحال نئی نئی تاریخیں ہی سامنے آرہی ہیں

مزید :

علاقائی -خیبرپختون خواہ -پشاور -