امریکی اڈے پر فائرنگ کرنے والا سعودی فوجی، امریکی حکام نے اس کا موبائل فون اَن لاک کیا تو انتہائی حیران کن انکشافات سامنے آگئے

امریکی اڈے پر فائرنگ کرنے والا سعودی فوجی، امریکی حکام نے اس کا موبائل فون ...
امریکی اڈے پر فائرنگ کرنے والا سعودی فوجی، امریکی حکام نے اس کا موبائل فون اَن لاک کیا تو انتہائی حیران کن انکشافات سامنے آگئے

  

واشنگٹن(مانیٹرنگ ڈیسک) گزشتہ سال دسمبر میں ایک زیرتربیت سعودی فوجی نے امریکی فوجی اڈے پر فائرنگ کرکے تین امریکی فوجیوں کو موت کے گھاٹ اتار دیا تھا۔ اب اس کے موبائل فونز ان لاک کرنے کے بعد امریکی حکام نے اس کے متعلق حیران کن انکشاف کر دیا ہے۔ میل آن لائن کے مطابق اٹارنی جنرل ولیم بیر اور ایف بی آئی کے ڈائریکٹر کرس رے نے گزشتہ روز ایک پریس کانفرنس میں بتایا کہ الشمرانی نامی زیرتربیت سعودی فوجی کے دو آئی فونز ان لاک کر لیے گئے ہیں اور ان سے معلوم ہوا ہے کہ وہ کئی سالوں سے دہشت گرد تنظیم القاعدہ کے ساتھ وابستہ تھا۔

رپورٹ کے مطابق محمد الشمرانی تربیت کے لیے امریکہ میں ایک نیول ایئربیس پر موجود تھا جہاں اس نے فائرنگ کر ڈالی جس سے 8امریکی فوجی زخمی بھی ہوئے تھے۔ امریکی حکام نے اس کے قبضے سے دو آئی فونز برآمد کیے اور ایپل کمپنی سے ان آئی فونز کا ڈیٹا فراہم کرنے کو کہا لیکن ایپل نے اس سلسلے میں کسی بھی طرح کا تعاون کرنے سے انکار کر دیا۔ اب ایف بی آئی اور دیگر اداروں نے وہ دونوں فون ان لاک کر لیے ہیں۔ پریس کانفرنس میں اٹارنی جنرل نے ایپل پر کڑی تنقید کرتے ہوئے کہا کہ کمپنی کو دہشت گردی کے معاملے میں حکام کے ساتھ تعاون کرنا چاہیے تھا۔ انہوں نے کانگریس سے مطالبہ کیا کہ وہ ایپل اور دیگر ٹیکنالوجی کمپنیوں کے خلاف ایکشن لے اور انہیں مجرموں کی تفتیش کے سلسلے میں لاءانفورسمنٹ کی مدد کرنے کا پابندبنائے۔

مزید :

بین الاقوامی -