یوم فشار خون

یوم فشار خون

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

یوم فشار خون کے سلسلے میں کراچی پریس کلب میں ماہرین صحت کی ٹیم نے میڈیا کے نمائندوں سے جدید تحقیق اور معلومات کا تبادلہ کیا۔ جدید تحقیق کے مطابق پاکستان میں ہائی بلڈ پریشر کی عالمی شرح (33 فیصد) کے مقابلے میں 44 فیصد ہے جو حیران کن حد تک زیادہ ہے۔ ہائی بلڈ پریشر میں بعض دفعہ مریض کو اس کی علامات کا اندازہ نہیں ہوتا لیکن اس کی وجہ سے دل کی بیماریوں، فالج اور گردوں کی خرابی کے علاوہ بھی بعض پیچیدہ امراض کا خطرہ رہتا ہے۔ ماہرین کی رائے ہے کہ سگریٹ نوشی اور تمباکونوشی میں استعمال ہونے والے نئے کیمیکلوں (ویپ جوس یا فلوئیڈز وغیرہ) کی وجہ سے ہائی بلڈ پریشر کے مسائل پیدا ہوتے ہیں۔ ماہرین صحت کے خدشات کے علاوہ موجودہ لائف سٹائل بھی ہائی بلڈ پریشر کی ایک بڑی وجہ ہے، اکثر لوگ رات گئے مرغن غذائیں کھا کر سو جاتے ہیں جس کی وجہ سے کچھ عرصے بعد بہت سے طبی مسائل پیدا ہونا شروع ہو جاتے ہیں۔ ورزش کرنے کا رحجان بھی بہت کم ہے، زیادہ تر لوگ موبائل فون اور لیپ ٹاپ پر وقت گذارتے ہیں، اس طرز زندگی کو بھی تبدیل کرنے کی ضرورت ہے۔ ملکی بجٹ میں صحت پر بہت کم رقم مختص کی جاتی ہے۔ دنیا بھر میں تعلیم او صحت کو اہمیت دی جاتی ہے لیکن ہمارے ملک میں اس کے برعکس کیا جاتا ہے صحت اور تعلیم کے لئے ترجیحاتی بنیادوں پر بجٹ مختص نہیں کیا جاتا۔ صحت مند قوم پروان چڑھانے کیلئے صحت کے پروگراموں پر خصوصی توجہ دی جانی چاہئے۔

مزید :

رائے -اداریہ -