مصر میں ملنے والی 2300 سال پرانی چیز جسے آج تک سائنسدان ایک پرندے کی لاش سمجھتے رہے، دراصل کیا چیز ہے؟ ایسا انکشاف کہ کو ئی سوچ بھی نہ سکتا تھا

مصر میں ملنے والی 2300 سال پرانی چیز جسے آج تک سائنسدان ایک پرندے کی لاش سمجھتے ...
مصر میں ملنے والی 2300 سال پرانی چیز جسے آج تک سائنسدان ایک پرندے کی لاش سمجھتے رہے، دراصل کیا چیز ہے؟ ایسا انکشاف کہ کو ئی سوچ بھی نہ سکتا تھا

  

لندن (نیوز ڈیسک)قدیم مصری ممیوں پر تحقیق کرنے والے برطانوی سائنسدانوں نے یہ انکشاف کرکے سب کو حیران کردیا ہے کہ برطانیہ کے میڈ سٹون میوزیم میں محفوظ 2300 سال قدیم ممی، جسے آج تک ہر کوئی ایک عقاب کی ممی سمجھتا رہا، وہ دراصل اسقاط حمل کے نتیجے میں مردہ پیدا ہونے والے خام بچے کی حنوط شدہ لاش ہے۔

اگر آپ ترکی یا مصر جانا چاہتے ہیں تو اس سے بہتر موقع پھر کبھی نہیں ملے گا کیونکہ۔۔۔

میل آن لائن کی رپورٹ کے مطابق یہ ممی ایک طویل عرصے سے میڈ سٹون میوزیم میں محفوظ تھی۔ اس سے پہلے متعدد بار سائنسدان اس پر تحقیق کرچکے تھے اور اس بات پر اتفاق پایا جاتا تھا کہ یہ ایک عقاب کا حنوط شدہ مردہ جسم تھا۔ حال ہی میں سائنسدانوں نے جدید ترین ٹیکنالوجی سے اس ممی پر دوبارہ تحقیقات کا فیصلہ کیا اور بالآخر اس حیرت انگیز انکشاف نے سب کو حیران کردیا کہ دراصل یہ ایک بچے کی حنوط شدہ لاش ہے۔ سائنسدانوں کا کہنا ہے کہ غالباً اسے 323 قبل مسیح سے 330 قبل مسیح کے عرصے کے دوران حنوط کیا گیا۔

اس میوزیم میں موجود حنوط شدہ لاشوں پر تحقیق کرنے والے سائنسدانوں نے رواں ہفتے کے دوران یہ دوسری کامیابی حاصل کی ہے۔ اس سے پہلے ایک ممی کے بارے میں انکشاف ہوا کہ اس کی عمر 14 سال نہیں تھی، جیسا کہ پہلے سمجھا جاتا تھا، بلکہ جب اسے حنوط کیا گیا تو اس کی عمر تقریباً 30 برس رہی ہوگی۔

مزید : ڈیلی بائیٹس