جندول ،سہولیات کے فقدان اورموسم سرما کی آمد ،بنشاہی سے لوگوں کی نقل مکانی شروع

جندول ،سہولیات کے فقدان اورموسم سرما کی آمد ،بنشاہی سے لوگوں کی نقل مکانی ...

جندول(نمائندہ پاکستان) سہولیات کی فقدان اور موسم سرما کی آمد ، پاک افغان بارڈر پر موجود علاقہ بنشاہی سے علاقائی لوگوں نے نقل مکانی شروع کر دی ، طلبہ و طالبات کی تعلیمی سرگرمیاں بھی متاثر ہوگی،موسم سرماکی آمد شروع ہوتے ہی افغان بارڈر پر موجود پاکستانی علاقہ بنشاہی کے عوام نے گھریلوں سامان اور مویشیوں سمیت زیریں علاقہ جات کو نقل مکانی شروع کر دی ہے اور لوگ قافلوں کی شکل میں پیدل سفر کر کے ثمر باغ ،منڈا ،تیمرگرہ اور دیگر شہری علاقوں کو منتقل ہونا شروع ہو گئے ہیں ، نقل مکانی کے حوالہ سے صحافیوں کو تفصیلات فراہم کرتے ہوئے شیر ولی ، ولایت خان ،رضاء خان ، نعیم خان ،سہر گل ،بختیار وغیرہ کا کہنا تھا کہ بنشاہی قدرتی حسن سے مالا مال علاقہ ہے تاہم یہاں سہولیات نا م کی کوئی شے موجود نہیں ،ان کا کہنا تھا کہ علاقہ میں سو فیصد لوگ ان پڑھ ہیں اور سرکاری سکولوں میں دور دراز علاقوں سے تعینات شدہ اساتذہ سہولیات کے فقدان کی وجہ سے ڈیوٹیاں سرانجام دینے کیلئے نہیں آتے ، ان کا مزید کہنا تھا کہ اس علاقہ کا روڈ تباہ حال ، فارمیسی موجود نہیں ،بجلی موجود نہیں اور جب موسم سرما میں برفباری ہو جاتی ہے پھر عوام کا شہری علاقوں سے رابطہ مکمل منقطع ہو جاتا ہے اور ضروری سامان ،ادویات ، اجناس ،کپڑوں وغیرہ کی خریداری کیلئے شہری علاقوں کو پیدل آنا ناممکن ہو جاتا ہے ،مشران کا کہنا تھا کہ ہر حکومت کے آنے سے پہلے انتخابی مہم کے دوران سیاسی جماعتوں کے امیدواران و کارکنان وعدہ کرتے ہیں کہ منتخب ہوکر علاقہ کی محرومیوں کا ازالہ اور خراب روڈ کو مرمت کراینگے تاہم حکومت کے قیام کے بعد اپنے وعدوں سے مکر جاتے ہیں ، اہلیان علاقہ کا کہنا تھا کہ ان کی دلی خواہش ہے کہ بنشاہی میں ہنسی خوشی زندگی بسر کرے تاہم سہولیات موجود نہ ہونے کی وجہ سے ہزاروں روپے کرچ کر کے نقل مکانے پر مجبور ہو جاتے ہیں اور اپنا گھر بار موجود ہونے کے باوجود IDPsکی زندگی گذارنے پر مجبور ہو جاتے ہیں، انہوں نے چیف آف آرمی سٹاف ،مرکزی و صوبائی حکومت اور منتخب ممبران سے علاقہ کو بنیادی سہولیات سے آراستہ کرنے کا مطالبہ کیا۔

مزید : کراچی صفحہ اول