”آئی فون صارفین کا ڈیٹا بالکل بھی محفوظ نہیں ہے۔۔۔“ ایپل ڈیٹا اکٹھا کرنے کیلئے کیا طریقہ استعمال کر رہی ہے اور اس میں کیا معلومات شامل ہوتی ہیں؟ روسی کمپنی کا ایسا انکشاف کہ آپ شدید پریشان ہو جائیں گے

”آئی فون صارفین کا ڈیٹا بالکل بھی محفوظ نہیں ہے۔۔۔“ ایپل ڈیٹا اکٹھا کرنے ...
”آئی فون صارفین کا ڈیٹا بالکل بھی محفوظ نہیں ہے۔۔۔“ ایپل ڈیٹا اکٹھا کرنے کیلئے کیا طریقہ استعمال کر رہی ہے اور اس میں کیا معلومات شامل ہوتی ہیں؟ روسی کمپنی کا ایسا انکشاف کہ آپ شدید پریشان ہو جائیں گے

  

لاہور (مانیٹرنگ ڈیسک) سمارٹ فون اور انٹرنیٹ صارفین ذاتی معلومات کے تحفظ کیلئے سے زیادہ فکرمند رہتے ہیں اور ایسی کمپنیوں سے دور رہنے کی کوشش کرتے ہیں جو صارفین کی ذاتی معلومات میں مداخلت کرتی ہیں لیکن ایسے افراد کیلئے تشویشناک خبر یہ ہے کہ دنیا بھر میں سب سے زیادہ محفوظ سمجھی جانے والی کمپنی بھی ڈیٹا چرا رہی ہے۔

”حاملہ خاتون اور آئی فون 7۔۔۔“ ایپل کے نئے فون کے بارے میں ایسی خبر آ گئی جسے پڑھ کر آپ اپنے فون سے خوف کھانے لگیں گے، بیچنے کا بھی سوچ سکتے ہیں

دنیا بھر کے لوگ ذاتی معلومات کے تحفظ کے معاملے میںآئی فون پر بہت زیادہ اعتماد کرتے ہیں اور یہ سمجھتے ہیں کہ ان کی ذاتی معلومات بالکل محفوظ ہیں تاہم بری خبر یہ ہے کہ ایپل بھی اپنے صارفین کی ذاتی معلومات اکٹھی کرتی ہے اور اس سے بھی بری خبر یہ ہے کہ یہ بات صارفین کے علم میں لائی ہی نہیں جاتی۔

روس کی ڈیجیٹل فرانزک کمپنی ”ایلکوم سافٹ“ نے دعویٰ کیا ہے کہ جن آئی فونز میں آئی کلاﺅڈ لگا ہوتا ہے وہ فون خودکار طریقے سے صارفین کی کال کی تفصیلات سرورز میں اپ لوڈ کرتے ہیں۔ ان تفصیلات میں فون کالز کا تمام ڈیٹا بمعہ تاریخ، وقت اور دورانیہ شامل ہوتا ہے اور کمپنی یہ ڈیٹا 4 مہینے تک سرورز پر رکھتی ہے۔ اس ڈیٹا میں مسڈ اور بائی پاس ہونے والی کالیں بھی شامل ہوتی ہیں۔ اس سے بھی بری خبر یہ ہے کہ ایف بی آئی اور سی آئی اے جیسی کوئی بھی ایجنسی فون سے ڈائریکٹ ڈیٹا حاصل نہ ہونے کی صورت میں ایک عدالتی حکم کے ذریعے کمپنی سے یہ تمام تفصیلات حاصل کر سکتی ہے۔

کمپنی کے مطابق امریکہ میں بڑی سیلولر کمپنیاں ایک سال سے بھی زیادہ تک کالز کی معلومات رکھ سکتی ہیں۔ اسی طرح آئی فون کے فیچر ”فیس ٹائم“ کے ذریعے کی جانے والی آڈیو اور ویڈیو کالز کی معلومات بھی سروز پر اپ لوڈ ہوتی ہیں جبکہ آئی او ایس ورژن 10 میں تو دیگر ایپلی کیشنز جیسا کہ واٹس ایپ، سکائپ اور وائبر وغیرہ سے کی جانے والی بات چیت کا ڈیٹا بھی آئی کلاﺅڈ کے سروز پر بھیجا جا رہا ہے۔

پرانی تصاویر کو سیکنڈوں میں سکین کرنے والی گوگل ایپ متعارف

واضح رہے کہ ایلکوم سافٹ کمپنی اپنے ”فون بریکر سافٹ وئیر ٹول“ کی اپ ڈیٹ بھی جاری کر رہی ہے جو کسی بھی صارف کے آئی کلاﺅڈ سے اس کے پاس ورڈ کے بغیر ہی ڈیٹا نکال سکتا ہے۔ کمپنی کا سافٹ وئیر قانون نافذ کرنے والے اداروں، کارپوریٹ سیکیورٹی ڈیپارٹمنٹس حتیٰ کہ پرائیویٹ افراد بھی استعمال کرتے ہیں ۔ کمپنی کا کہنا ہے کہ اگر آپ آئی فون صارف کے کمپیوٹر سے ٹوکن حاصل کر لیں تب بھی اس کا پاس ورڈ جانے بغیر آئی کلاﺅڈ میں موجود تصاویر اور ویڈیوز سمیت تمام ڈیٹا تک رسائی حاصل کی جا سکتی ہے۔

یہاں یہ امر بھی قابل ذکر ہے کہ ماضی میں فلمی دنیا کے ستاروں کی لیک ہونے والی تصاویر بھی ان کے آئی کلاﺅڈ اکاﺅنٹ سے ہی چرائی گئی تھیں اور کہا جاتا ہے کہ ہیکرز نے ایسا کرنے کیلئے ایلکوم سافٹ کمپنی کا سافٹ وئیر ہی استعمال کیا تھا۔

مزید : سائنس اور ٹیکنالوجی