نیشنل ایکشن پلان کے تحت فوجداری قوانین میں ترامیم کا فیصلہ ،حکومت نے لاہور ہائی کورٹ سے قابل ججوں کا پینل مانگ لیا

نیشنل ایکشن پلان کے تحت فوجداری قوانین میں ترامیم کا فیصلہ ،حکومت نے لاہور ...
نیشنل ایکشن پلان کے تحت فوجداری قوانین میں ترامیم کا فیصلہ ،حکومت نے لاہور ہائی کورٹ سے قابل ججوں کا پینل مانگ لیا

  

لاہور(نامہ نگار خصوصی )نیشنل ایکشن پلان کے تحت حکومت نے فوجداری قوانین میں ترامیم کے لئے لاہور ہائیکورٹ سے 3 قابل جوڈیشل افسروں کا پینل مانگ لیاہے۔

نیشنل ایکشن پلان کے تحت حکومت کی طرف سے متعلقہ اداروں سے مشاورت کا سلسلہ جاری ہے، اس سلسلے میں وفاقی حکومت کی ہدایت پر محکمہ داخلہ پنجاب نے لاہور ہائیکورٹ کوایک مراسلہ بھیجا ہے جس میں کہا گیا ہے کہ آرمی پبلک سکول پشاور میں دہشت گردوں کے حملے کے بعد نیشنل ایکشن پلان کے تحت حکومتی سطح پر اس بات کی ضرورت محسوس کی گئی کہ فوجداری قوانین میں ترمیم کی جائے تاکہ دہشت گردی کے واقعات میں ملوث ملزموں کو زیادہ سے زیادہ سخت سزائیں مل سکیں، اس سلسلے میں صوبائی سطح پر گروپ تشکیل دیئے گئے ہیں تاکہ تمام متعلقہ اداروں سے قوانین میں تبدیلی کے لئے مشاورت مکمل کی جائے، محکمہ داخلہ کی طرف سے لاہور ہائیکورٹ سے کہا گیا ہے کہ وہ بھی فوجداری قوانین میں ترمیم کے حوالے سے اپنی سفارشات دے اور اس سلسلے میں 3 قابل جوڈیشل افسروں کا پینل فراہم کرے جو فوجداری قوانین میں ترمیم کے حوالے سے حکومت کی انتظامی سطح پر معاونت کر سکے جوڈیشل افسروں سمیت دیگر متعلقہ اداروں سے مشاورت مکمل کرنے کے بعد محکمہ داخلہ پنجاب اپنی سفارشات وزارت داخلہ کو بھجوائے گا جس کے بعد ان سفارشات کو پارلیمنٹ میں حتمی منظوری کے لئے پیش کیا جائے گا۔

مزید : لاہور