چینی اور امریکی فوج نے مل کر پہلی مرتبہ ایسا کام کر دیا کہ پوری دنیا داد دینے لگی

چینی اور امریکی فوج نے مل کر پہلی مرتبہ ایسا کام کر دیا کہ پوری دنیا داد دینے ...

بیجنگ (نیوز ڈیسک ) امریکا اور چین کے درمیان ایک عرصے سے سخت تناﺅ کی کیفیت ہے اور دونوں ممالک کی افواج بحیرہ جنوبی چین کے علاقے میں متعدد بار آمنے سامنے آچکی ہیں لیکن ڈونلڈ ٹرمپ کے صدر منتخب ہونے پر کچھ حیرت انگیز تبدیلیاں دیکھنے میں آرہی ہیں۔ ویب سائٹ ملٹری ٹائمز کی رپورٹ کے مطابق امریکا میں غیر متوقع سیاسی تبدیلی آنے پر دونوں ممالک میں یہ احساس مضبوط ہو رہا ہے کہ تصادم کی بجائے تعاون کو فروغ دیا جائے اور اس سمت میں ایک بڑا قدم اٹھاتے ہوئے پہلی بار دونوں ممالک کی افواج نے مشترکہ ریلیف مشقوں کا انعقاد کیا ہے۔ 

یہ مشقیں گزشتہ روز چین کے جنوب مغربی شہر کنمنگ میں منعقد ہوئیں، جن کا مقصد قدرتی آفات کی صورت میں مل کر ریلیف آپریشن سرانجام دینا تھا۔ چین کی جنوبی کمانڈ کے کمانڈر جنرل لیو شیاوو نے مشقوں کے بارے میں بات کرتے ہوئے کہا کہ اس طرح کے اقدامات دونوں ممالک کی افواج کے درمیان تعاون کو فروغ دیں گے۔ انہوں نے توقع کا اظہار کیا کہ آنے والے دنوں میں مشترکہ مشقوں کا مزید بڑے پیمانے پر انعقاد کیا جائے گا۔ امریکی فوج کے پیسیفک کمانڈر جنرل رابرٹ براﺅن کا بھی کہنا تھا کہ وہ اپنے ملک کی نئی انتظامیہ کو تجویز دیں گے کہ وہ اس تعاون کو برقرار رکھنے کیلئے اقدامات کرے۔

واضح رہے کہ نومنتخب صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی جانب سے چین کے متعلق اپنی عسکری پالیسی کا واضح اظہار تاحال سامنے نہیں آیا لیکن امریکا کے قریبی اتحادی پہلے ہی تشویش میں مبتلا ہیں کیونکہ یہ خیال عام پایا جا رہا ہے کہ ڈونلڈ ٹرمپ ماضی کی تصادم پر مبنی پالیسی کو تبدیل کرنے والے ہیں۔

مزید : بین الاقوامی