سپریم کورٹ پرامن کارکنان اور نہتے عوام پر حکمرانوں کے وحشیانہ تشدد کا ازخود نوٹس لے ،جلد قانونی چارہ جوئی کریں گے:پرویز خٹک

سپریم کورٹ پرامن کارکنان اور نہتے عوام پر حکمرانوں کے وحشیانہ تشدد کا ازخود ...
سپریم کورٹ پرامن کارکنان اور نہتے عوام پر حکمرانوں کے وحشیانہ تشدد کا ازخود نوٹس لے ،جلد قانونی چارہ جوئی کریں گے:پرویز خٹک

روزنامہ پاکستان کی اینڈرائیڈ موبائل ایپ ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

نوشہرہ (مانیٹرنگ ڈیسک)وزیراعلیٰ خیبرپختونخوا پرویز خٹک نے سپریم کورٹ سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ پرامن کارکنان اور نہتے عوام پر حکمرانوں کے وحشیانہ تشدد کا ازخود نوٹس لے ،یہ لوگ خود کو آئین اور قانون سمجھتے ہیں ،اِنہوں نے صوبوں کے درمیان نفاق ڈالنے کی کوشش اورپنجابی پختون کو آمنے سامنے دشمن بنا کر کھڑا کرنے کا اقدام کیا ہے،اپنی کمزوریاں چھپانے کیلئے قوم میں دراڑیں ڈال کر صوبوں کے عوام کو غلط پیغام دیا ہے ، نہتے عوام پر جان لیو ا تشدد بنیادی حقوق پر ڈاکہ ڈالنے اور ملک کو توڑنے کی اس مبینہ سازش کا سپریم کورٹ ازخود نوٹس لے۔

مزید پڑھیں:’ ایک نوجوان لڑکی جس نے پوری سعودی مملکت کو ہلاکر رکھ دیا ‘

نوشہرہ میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے پرویز خٹک کا کہنا تھا کہ میں وفاقی وزیر داخلہ ، سیکرٹری داخلہ ،آئی جی پنجاب اور کمانڈنٹ ایف سی سے پوچھتا ہوں کہ انہوں نے نہتے عوام پر جو تشدد کیا وہ کس قانون کے تحت کیااور اْن کا جرم کیا تھا؟۔اْنہوں نے عندیہ دیا کہ وہ ذمہ داران کے خلاف قانونی چارہ جوئی کریں گے اور ان کے خلاف ایف آئی آر درج کرنے والے ہیں جو قانونی اور آئینی راستہ ہے۔ وزیراعلیٰ پرویز خٹک کا کہنا تھا کہ وفاقی وزیر داخلہ نے تسلیم کیا ہے کہ انہوں نے نہتے عوام پر لاٹھی چارج اور تشدد کیا ہے،اپنے اس اقدام کے حق میں غلط دلیلیں بھی دیتے ہیں،ان سے پوچھا جائے کہ یہ کس آئین اور قانون کے تحت کیا گیا ہے؟کس قانون کے تحت سڑکیں بند کی گئیں؟کون سے آئین کے تحت نہتے عوام پر جان لیوا کاروائی کی گئی ہے؟ہم نے توحکمرانوں کے بند کئے ہوئے راستے کھولے ہیں، اسلام آباد بند کرنے کا الزام غلط ہے،حکمرانوں نے پورا پاکستان جام کر رکھا تھا ہم نے اسے کھولا ہے،ہمارا کوئی پلان نہیں تھا اور نہ ہی اسلام آباد بند کرنے کیلئے ہمارے پاس کوئی سوچ تھی،ان لوگوں نے خواہ مخواہ ایک ہوا کھڑی کی، ملک کو یرغمال بنایا اور اپنے کرتوت چھپانے کیلئے نہتے عوام کو ظلم کا نشانہ بنایا اور اس غیر قانونی اور غیر آئینی عمل پر بغلیں بجاتے رہے۔

انہوں نے واضح کیا کہ انہوں نے اتنا کہا تھا کہ ایف سی ہمارے صوبے کی ہے،اس کا استعمال غلط کیا گیا ہے،ہم نے سوال کیا کہ ایف سی کا یہ استعمال کس طرح قانونی ہے؟ ہم اس پر سیاست نہیں کر رہے،سیاست تو یہ بدعنوان حکمران کر رہے ہیں جو آئین اور قانون کے ٹھیکیدار بنے ہوئے ہیں۔پرویز خٹک نے کہا کہ مرکزی حکمران اپنے آپ کو آئین اور قانون بنا کر پیش کرتے ہیں اور آئین اور قانون کی اپنی مرضی کے مطابق تشریح کر تے ہیں،ہر وہ عمل جو ان کے کرتوتوں اور چوری کی پردہ پوشی کرے وہ جائز اور قانونی ہوتا ہے،یہ بلاوجہ نہتے عوام کو تشدد کا نشانہ بنائیں اْنہیں موت کے گھاٹ اْتار دیں، پاکستان بند کرکے عوام کا جینا محال کردیں،اس سب کو جائز سمجھتے ہیں اور اگرعوام اپنے آئینی اور قانونی حق کیلئے آواز بلند کریں تو وہ غیر قانونی ہو جاتا ہے۔

مزید : نوشہرہ