ٹرمپ نے ایک ایسے شخص کو امریکی خفیہ ایجنسی CIA کا سربراہ بنانے کا فیصلہ کر لیا کہ جان کر آپ کے رونگٹے کھڑے ہو جائیں گے

ٹرمپ نے ایک ایسے شخص کو امریکی خفیہ ایجنسی CIA کا سربراہ بنانے کا فیصلہ کر لیا ...
ٹرمپ نے ایک ایسے شخص کو امریکی خفیہ ایجنسی CIA کا سربراہ بنانے کا فیصلہ کر لیا کہ جان کر آپ کے رونگٹے کھڑے ہو جائیں گے

  

واشنگٹن (نیوز ڈیسک) امریکا کے نئے صدر ڈونلڈ ٹرمپ آنے والوں دنوں میں کیا کرنے جا رہے ہیں اس کی خوفناک جھلک ان کے اپنے بیانات میں ہی نہیں بلکہ ان کی منتخب کردہ نئی ایڈمنسٹریشن میں بھی بخوبی نظر آرہی ہے۔ میل آن لائن رپورٹ کے مطابق ڈونلڈ ٹرمپ نے سفاکیت کے لئے شہرت رکھنے والے سابق فوجی افسر مائک پامپیو کو CIA کا سربراہ مقرر کر دیا ہے۔ یہ صاحب تفتیش کے غیر انسانی اور بھیانک طریقوں کیلئے خصوصی شہرت رکھتے ہیں۔ 

نائن الیون دہشتگردی کے بعد امریکی تفتیش کاروں کی جانب سے ملزمان پر لرزہ خیز تشدد کرنے پر دنیا بھر میں اور حتیٰ کہ امریکا میں بھی اعتراض کیا گیا، لیکن مائک پامپیو ان لوگوں میں شامل تھے جنہوں نے واٹر بورڈنگ جیسے غیر انسانی طریقہ تفتیش کی بھرپور حمایت کی۔ رونگٹے کھڑے کر دینے والا تشدد اور ناقابل بیان ازیتوں پر مشتمل تفتیشی نظام بنانے اور استعمال کرنے والوں کیلئے پامپیو ہمیشہ تعریفی الفاظ استعمال کرتے رہے ہیں۔ انہوں نے بے رحم اور انسانیت سوز تشدد کرنے والے امریکی تفتیش کاروں کو محب وطن اور قابل فخر قرار دیا۔ اس سے زیادہ تشویش کی بات کیا ہوسکتی ہے کہ یہ شخص CIA کا سربراہ ہو گا، جبکہ وہ شخص امریکی صدر منتخب ہو چکا ہے جو خود واٹر بورڈنگ اور دیگر ایسے تفتیشی طریقوں کی حمایت کر چکا ہے۔

ڈونلڈ ٹرمپ اپنی انتخابی مہم کے دوران بارہا کہہ چکے ہیں کہ واٹر بورڈنگ کو تشدد تصور کیا جا سکتا ہے لیکن ان کے خیال میں یہ بالکل ٹھیک کام ہے اور اس سے نتائج بھی حاصل ہوتے ہیں۔ ان کا تو یہ بھی کہنا ہے کہ ” ہمیں واٹر بورڈنگ سے بھی زیادہ سخت طریقوں کی جانب جانا چاہیے کیونکہ یہ تشدد کی معمولی قسم ہے ۔“

مزید : ڈیلی بائیٹس