پرائیویٹ سکولوں کی جانب سے معلمات کی تنخواہیں دبانے کا سلسلہ تیز

  پرائیویٹ سکولوں کی جانب سے معلمات کی تنخواہیں دبانے کا سلسلہ تیز

  



ملتان(سٹاف رپورٹر) پنجاب بھر کی طرح ملتان کے پرائیویٹ سکولوں کی جانب سے بھی لیڈی ٹیچرز کی تنخواہیں دبانے کا سلسلہ جاری ہے جبکہ حکومت کی جانب سے مقرر کی گئی کم سے کم تنخواہ کی بھی کھلے عام خلاف ورزی کی جارہی ہے۔ تفصیل کے مطابق بچوں کو تعلیم جیسی بنیادی سہولت فراہم (بقیہ نمبر14صفحہ12پر)

کرنے کیلئے تمام پرائیویٹ سکولز کی جانب سے والدین سے بھاری بھرکم فیسیں وصول کی جارہی ہیں جبکہ دوسری جانب حکومت پاکستان کی جانب سے مزدور کی کم سے کم تنخواہ 17 ہزار500روپے رکھی جانے کے باوجود 90 فیصد سے زائد پرائیویٹ سکولز مختلف رہائشی علاقوں میں چھوٹی چھوٹی برانچز کھول کر لیڈی ٹیچرز کو محض 3 سے 8 ہزار روپے ماہانہ پر بھرتی کررہے ہیں۔ ایسے میں محکمہ تعلیم کے اعلیٰ افسران اور ضلعی حکومتوں کی جانب سے سے خاموشی مجرمانہ غفلت کا منہ بولتا ثبوت ہے۔ علاوہ ازیں متعدد سکولوں کی جانب سے مرد و خواتین اساتذہ کی تنخواہیں دبانے کا سلسلہ بھی شروع کردیا گیا ہے۔

تنخواہیں

مزید : ملتان صفحہ آخر