شیخوپورہ،16سالہ لڑکی مبینہ بد اخلاقی کے بعد قتل،ورثاء کا ڈی پی او آفس کے باہر احتجاج

شیخوپورہ،16سالہ لڑکی مبینہ بد اخلاقی کے بعد قتل،ورثاء کا ڈی پی او آفس کے باہر ...

  



شیخو پورہ(بیورورپورٹ)شیخوپورہ میں بچیوں سے بداخلاقی کے بعد قتل کا سلسلہ نہ رک سکا۔تھانہ سٹی اے ڈویژن کے علاقے نشاط ٹاؤن میں 16 سالہ گھریلو ملازمہ مبینہ بداخلاقی کے بعد قتل مقتولہ زینب کے منہ اور سر پر تشدد کے نشانات۔لواحقین کے مطابق ان کی بچی نشاط ٹاؤن میں لیاقت ورک کے گھرگھریلوملازمہ تھی جس کو درندگی کے بعد قتل کر دیا گیا جبکہ لیاقت ورک کا گارڈ اور ملازم بچی کو مردہ حالت میں ہسپتال پھینک کر فرار ہو گئے۔مقتولہ کی والدہ نے الزام عائد کیا ہے کہ میری بچی کو تشدد کا نشانہ بنا کر بداخلاقی کے بعد قتل کیا گیا جبکہ پولیس کارروائی نہیں کر رہی۔5 گھنٹے سے ہسپتال میں موجود ہیں کوئی بات نہیں سن رہا۔پولیس کے مطابق زینب نے زہریلی گولیاں کھا کر خودکشی کی جبکہ ڈی پی او شیخوپورہ غازی صلاح الدین کا کہنا ہے کہ اصل حقائق پوسٹمارٹم کے بعد سامنے آئیں گے۔پولیس نے ضروری کارروئی کے بعدڈرائیور علی اورعمران وغیرہ4 ملزمان کے خلاف مقتولہ کے بھائی عبد الرحمان کی درخواست پر قتل کامقدمہ درج کرکے مختلف پہلوؤں سے تفتیش شروع کردی ہے۔مبینہ بداخلاقی کے بعد قتل ہونے والی 16 سالہ زینب کے ورثاء کا ڈی پی او آفس کے باہر احتجاج، ورثاء نے لاش سڑک پر رکھ کر ٹریفک کو معطل کر دیا پولیس کے خلاف نعرے بازی،مقتولہ کے ورثاء کا کہنا تھا کہ انصاف نہ ملا تو خود سوزی کرکے زندگی کا خاتمہ کر لیں گے،واقع کے 16 گھنٹے بعد پوسٹ مارٹم کے بعد لاش ورثاء کے حوالے کی گئی،ملزموں کو تاحال گرفتار نہ کیا گیا،ملزمان کی طرف سے4 لاکھ روپے لے لو اور معاملے کو رفع دفع کر نے کا الزام  بھی لڑکی کے والدین نے عائد کیا ہے۔

 قتل

مزید : صفحہ آخر