سی پیک کے تحت قبائلی اضلاع میں 30 ہسپتال تعمیر کئے جائینگے: رپورٹ

سی پیک کے تحت قبائلی اضلاع میں 30 ہسپتال تعمیر کئے جائینگے: رپورٹ

  



اسلام آباد(آئی این پی) چین خیبر پختونخواکے قبائلی علاقوں میں آئندہ تین سے چار سالوں کے دوران اٹھاون سکولوں اور تیس ہسپتالوں کی تعمیر کے لئے پاکستان کی مدد کرے گا۔گوادر پرو میڈیا نیٹ نے سرکاری ذرائع کے حوالے سے اپنی رپورٹ میں بتایا کہ سی پیک کے دوسرے مرحلے میں کم ترقی یافتہ علاقوں میں سماجی شعبے کے منصوبوں کو ترجیح دی جائے گی۔سماجی معاشی سرگرمیوں کو فروغ دینے کے لئے لوئر دیر کے علاقے تیمر گرہ میں این پینتالیس ہائی وے کو سی پیک کے شمالی روٹ کے ساتھ منسلک کیا جائے دوسری جانب بلوچستان کے ضلع ژوب میں سی پیک کا مغربی روٹ این پینتالیس کے ساتھ ملایا جائے گا۔ذرائع کے مطابق ضرورت کے تحت خیبر پختونخواکے اضلاع سے گزرنے والی ہائی وے کو سی پیک کے متبادل روٹ کے طور پر بھی استعمال میں لایا جاسکے گا۔پاکستان اور چین کوئٹہ اور چمن کو گوادر اور پشاور سے کابل اور اس سے آگے قزاقستان کے علاقے کو ریلوے ٹریک سے لنک کرنے کے جامع منصوبے پر بھی کام کررہے ہیں چینی حکومت کے تعاون سے پاکستان کی وفاقی اور صوبائی حکومت قبائلی اضلاع کے لئے جامع ترقی کے منصوبے شروع کررہی ہیں جس سے قبائلی عوام کو تعلیم کے حصول کے ساتھ روزگار کے مواقع میسر آئیں گے جس سے ان علاقوں میں پائیدار امن کا قیام یقینی ہوگا۔اس حوالے سے خیبر پختونخوا کے وزیر اعلی محمود خان نے حالیہ دنوں میں وزیر اعظم کے نیشنل ایگریکلچرل ایمرجنسی پروگرام کے تحت قبائلی اضلاع کے لئے باجوڑ میں چھ ترقیاتی منصوبوں کا افتتاح کیا۔ان منصوبوں میں زیتون کی کاشت اور زیتون کے بیجوں سے تیل کا حصول، ارزاں نرخوں پر گندم کے بیج کی فراہمی،پولٹری،لائیوسٹاک اور ڈیری کے کاروبار کے لئے دودھ کے چلرز کی تقسیم شامل ہیں۔

رپورٹ

مزید : صفحہ آخر