ریاست مدینہ کا خلیفہ ہوتا تواب تک مستعفی ہوچکاہوتا ، اکبر ایس بابر نے نظام کودھاندلی زدہ قراردیدیا

ریاست مدینہ کا خلیفہ ہوتا تواب تک مستعفی ہوچکاہوتا ، اکبر ایس بابر نے نظام ...
ریاست مدینہ کا خلیفہ ہوتا تواب تک مستعفی ہوچکاہوتا ، اکبر ایس بابر نے نظام کودھاندلی زدہ قراردیدیا

  



اسلام آباد (ڈیلی پاکستان آن لائن)تحریک انصاف کے سابق رہنما اکبر ایس بابر نے کہاہے کہ فارن فنڈنگ کا کیس اس لئے لٹکا ہواہے کہ ہمارا نظام دھاندلی زدہ اور کمزور ہے، اگر کوئی ریاست مدینہ کا خلیفہ ہوتا تو اب تک استعفیٰ دے چکا ہوتا۔

جیونیوز کے پروگرام ”کیپٹل ٹاک“میں گفتگو کرتے ہوئے اکبر ایس بابر نے کہا کہ فارن فنڈنگ کا کیس اس لئے لٹکا ہواہے کہ ہمارا نظام دھاندلی زدہ اور کمزور ہے۔الیکشن کمیشن کے پاس تمام تراختیارات ہیں لیکن پانچ سال سے یہ کیس چل رہاہے ، فارن فنڈنگ کیس کی تحقیقات کیلئے بنائی جانیوالی کمیٹی کی 40میٹنگز ہوچکی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ یہ تین دن کا کام ہے پتہ نہیں کہ کیا مصلحتیں ہیں ؟ تحریک انصاف کا مقصد اس کیس کی التواءکا شکار کرنا تھا اور تحریک انصاف کی جانب سے سات رٹ پٹیشنز دائر کی گئی ہیں۔

انہوں نے کہا کہ جب ریاست مدینہ کے سربراہ سے کہا جاتاہے کہ اپناحسا ب دوتو وہ ہائیکورٹ میں جاکر کہاجاتاہے کہ اس کیس کے ٹرائل کو روکا جائے۔ انہوں نے کہا کہ اگر کوئی ریاست مدینہ کا خلیفہ ہوتا تو اب تک استعفیٰ دے چکا ہوتا۔

مزید : قومی