جامعات میں ریسرچ کلچر کا فروغ ناگزیر ہے: ڈاکٹر شاہانہ عروج

جامعات میں ریسرچ کلچر کا فروغ ناگزیر ہے: ڈاکٹر شاہانہ عروج

  

 صوابی(بیورورپورٹ)ویمن یونیورسٹی صوابی کی وائس چانسلر پروفیسر ڈاکٹر شاہانہ عروج کاظمی نے کہا کہ جامعات میں ریسرچ کلچر کا فروغ ناگزیر ہے،جامعات کی شناخت بلند وبانگ عمارتوں سے نہیں بلکہ اعلیٰ تدریس و تحقیق سے ہوتی ہے۔ ان خیالات کا اظہارانھوں نے  ویمن یونیورسٹی کی اکیڈمک کونسل کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ اجلاس میں الحاق شدہ کالجز میں ایسوسی ایٹ ڈگری پروگرام کی منظوری دی گئی۔ انسٹیٹیوٹ آف اسپیشل ایجوکیشن اینڈ اسپیچ تھراپی کے قیام کو بھی اجلاس میں منظور کر لیا گیا۔ویمن یونیورسٹی صوابی میڈیکل اینڈ ڈائگنوسٹک سینٹر کے قیام کی بھی منظوری دی گئی،طالبات کے لئے دفتر امور طلبہ اور مرکز نفسیات بھی قائم کیا جائے گا۔ ڈاکٹر شاہانہ عروج کاظمی نے کہا کہ میڈیکل اینڈ ڈائگنوسٹک سینٹرکے قیام سے ضلع صوابی کے لوگوں کے بے حد سہولیات میسر آئینگی۔ اجلاس میں ایڈوانس اسٹڈیس اینڈ ریسرچ بورڈ کے لئے اکیڈمک کونسل کے نمائندگان کو بھی نامزد کیا گیا۔ وائس چانسلر نے اساتذہ پر زور دیا کہ وہ بین الاقوامی تحقیقی اداروں اور جامعات سے تحقیقی و تدریسی روابط اور اشتراک استوار کریں۔اجلاس میں سال میں دو دفعہ داخلے جاری کرنے کی بھی منظوری دی گئی۔وائس چانسلر نے کہا کہ جلد مزید شعبے بھی متعارف کرائے جائیں گے،جدید عصری تقاضوں سے ہم آہنگ تعلیم کی فراہمی ہماری اولین ترجیح ہے، سماجی ترقی کے اہداف جدید تعلیم سے ہی حاصل کئے جاسکتے ہیں۔کورونا وائرس کے پیش نظرہم نے تمام کلاسز کو آن لائن کردیا ہے اور اب مڈٹرم امتحانات بھی آن لائن لینے جارہے ہیں، انھوں نے تمام اساتذہ اور طالبات کورونا وائرس ایس اوپیز پر سختی سے عمل پیرا ہونے کی ہدایت کی۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -