کومیسٹک‘ وزار ت خارجہ کی طرف  سے کنسورشیم آف ایکسی لینس کا  افتتاح‘ اسلام آباد میں تقریب‘ مختلف  یونیورسٹیوں کے وائس چانسلرز کی  شرکت‘ اہم امور پر تفصیلی لیکچرز

  کومیسٹک‘ وزار ت خارجہ کی طرف  سے کنسورشیم آف ایکسی لینس کا  افتتاح‘ اسلام ...

  

 بہاولپور(ڈسٹرکٹ رپورٹر) کومسٹیک اور وزرات خارجہ نے کنسورشیم آف ایکسی لینس قائم کر دیا۔ او آئی سی کی وزارتی اسٹینڈنگ کمیٹی برائے سائنسی اور تکنیکی تعاون کامسٹیک اور وزارت خارجہ، حکومت پاکستان نے ''کومسٹیک کنسورشیم آف ایکسی لینس'' (سی سی او ای) کا افتتاح کیا جو پاکستان اور او آئی سی کے ممبر ممالک کے ممتاز تعلیمی اور تحقیقی اداروں پر مشتمل ہے۔(بقیہ نمبر22صفحہ 6پر)

کومسٹیک میں سی سی او ای کی افتتاحی تقریب کوآرڈینیٹر جنرل، کومسٹیک، پروفیسر ڈاکٹر ایم اقبال چودھری کی  زیر صدارت منعقد ہوئی، جبکہ سہیل محمود، سیکرٹری خارجہ پاکستان تقریب کے مہمان خصوصی تھے۔قائداعظم یونیورسٹی، اسلامیہ یونیورسٹی بہاولپور، پنجاب یونیورسٹی، نیشنل یونیورسٹی آف سائنس اینڈ ٹیکنالوجی، گورنمنٹ کالج یونیورسٹی، لاہور، غلام اسحاق خان انسٹی ٹیوٹ آف انجینئرنگ سائنسز اینڈ ٹیکنالوجی، پاکستان انسٹی ٹیوٹ آف نیوکلیئر سائنس اینڈ ٹکنالوجی، این ای ڈی یونیورسٹی آف انجینئرنگ اینڈ ٹیکنالوجی، لاہور یونیورسٹی آف مینجمنٹ سائنسز، اور بہاؤالدین زکریا یونیورسٹی، ملتان، کے وائس چانسلرز اور سینئر حکام نے شرکت کی۔اپنے افتتاحی خطاب میں پروفیسر ڈاکٹر ایم اقبال چودھری نے کہا کہ سی سی او ای کا مقصد اداروں کے مابین سائنس اور ٹیکنالوجی میں شراکت کو فروغ دینا ہے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان نے سائنس اور ٹیکنالوجی کے میدان میں بہت کامیابیاں حاصل کیں ہیں اور اب وقت کا تقاضہ ہے کہ پاکستان کے اس کام کو دنیا کو دکھایا جائے۔ انہوں نے کہا کہ یہ فورم پاکستان میں جدید ٹیکنالوجی لائے گا اور سائنس، ٹیکنالوجی، انجینئرنگ اور ریاضی کے شعبوں میں مدد فراہم کرے گا۔ کومسٹیک اور وزارت خارجہ کا باہمی تعاون سائنس ڈپلومیسی میں نئی راہیں کھولے گا۔ اس موقع پر اپنے خطاب میں پروفیسر ڈاکٹر اطہر محبوب نے بتایا کہ حال ہی میں اسلامیہ یونیورسٹی بہاول پور میں ماحولیات، زراعت کے شعبوں اور صحرائی اور بارانی علاقوں سے متعلق تحقیق کے لیے کثیر الجہتی منصبوں کا آغاز کیا گیاہے۔ صحرا ئے چولستان میں تحقیق کے لیے ایک جدید ترین تحقیقی مرکز قائم کریں گے۔ اس مرکز میں ہونے والی تحقیق سے اسلامی ممالک کی تنظیم کے رکن ممالک کو بھی مستفید کیا جائے گا۔ سی سی او ای کو وزارت خارجہ، حکومت پاکستان کے ''سائنس ڈپلومیسی انیشی ایٹو'' کے تحت لانچ کیا گیا ہے۔ سکریٹری خارجہ جناب سہیل محمود نے اپنے خطاب میں کہا کہ اعلیٰ تعلیم کے ادارے پاکستان کے مستقبل کی تشکیل کررہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ سی سی او ای کے اس اقدام کا مقصد پاکستان کی معروف یونیورسٹیوں اور او آئی سی ممبر ممالک کی یونیورسٹیوں کو تعاون اور اپنی کامیابیوں کو اجاگر کرنے کے لئے پلیٹ فارم مہیا کرنا ہے۔ سی سی او ای کے بانی ممبر یونیورسٹیوں کے وائس چانسلرز اور سینئر عہدیداروں نے اپنے اداروں کے موجودہ پروگراموں کے متعلق بتایا۔ انہوں نے سی سی او ای کے تحت اپنے بھر پور تعاون کی پیش کش کی اور کومسٹیک اور وزارت خارجہ کے اس اقدام کو سراہا۔

شرکت

مزید :

ملتان صفحہ آخر -