معروف شاعر سلام مچھلی شہری کا یومِ وفات(19نومبر)

معروف شاعر سلام مچھلی شہری کا یومِ وفات(19نومبر)
معروف شاعر سلام مچھلی شہری کا یومِ وفات(19نومبر)

  

سلام مچھلی شہری:

ان   کا اصل نام عبدالسلام تھا۔ وہ یکم جولائی 1921ءکو اترپردیش کے علاقے مچھلی شہر میں پیدا ہوئے۔دہلی ریڈیو اسٹیشن سے منسلک رہے۔ سلام ترقی پسند خیالات  اور نظریات کے مالک تھے جس کی جھلک ان کی شاعری میں نمایاں ہے۔ اس کے علاوہ رومانوی طرز کی شاعری میں بھی ان کا کلام خوبصورت رنگو ں اور فطرتی بہاؤ کے ساتھ اردو شاعری کا مضبوط حوالہ ہے۔ ان کا انتقال19نومبر 1973ءکو دہلی میں ہوا۔

نمونۂ کلام

شگفتہ بچوں کا چہرہ دکھائی دینے لگے 

میں کیا کروں کہ اُجالا دکھائی دینے لگے 

یہ سخت ظلم ہے مالک کہ صبح ہوتے ہی 

تمام گھر میں اندھیرا دکھائی دینے لگے 

وہ صرف میں ہوں جو سو جنتیں سجا کر بھی 

اُداس اُداس سا تنہا دکھائی دینے لگے 

میں کامیاب جبھی ہوں گا اے ربابِ حیات 

کہ بزم کو ترا نغمہ دکھائی دینے لگے 

گلاب اُگانے کی عادت سے فائدہ کیا ہے 

اگر گلاب میں شعلہ دکھائی دینے لگے 

مرا ہی عکس سہی پھر بھی وہ فرشتہ ہے 

جو غیر ہو کے بھی اپنا دکھائی دینے لگے 

بہت علیل ہو لیکن یہ بزدلی ہے سلامؔ 

کہ تم کو موت کا سایہ دکھائی دینے لگے 

شاعر: سلام مچھلی شہری

Shagufta   Bchon   Ka   Chehra   Dikhaai   Dainay   Lagay

Main   Kaya   Karun   Keh   Ujaala   Dikhaai   Dainay   Lagay

 Yeh   Sakht   Zulm   Hay   Maalik   Keh   Subh   Hotay  Hi

Tamaam   Ghar   Men   Andhaira   Dikhaai   Dainay   Lagay

 Wo   Sirf   Main  Main   Hun   Jo   Sao   Jannaten   Sajaa   Kar   Bhi

Udaas   Udaas   Sa   Tanha    Dikhaai   Dainay   Lagayaai    

 Main   Kaamyaab   Jabhi   Hun   Ga   Ay   Rubaab -e-Hayaat

Keh   Bazm   Ko   Tera   Naghma   Dikhaai   Dainay   Lagay

 Gulaab   Ugaanay   Ki   Aadat   Say   Kaya   Faaida   Hay

Agar   Gulaab   Men   Shola   Dikhaai   Dainay   Lagay

 Mira   Hi   Aks   Sahi   Phir   Bhi   Wo   Farishta

Jo   Ghair   Ho   K   Bhi   Apna   Dikhaai   Dainay   Lagay

 Bahut   Aleel   Ho   Lekin   Yeh   Buzdili   Hay   SALAM

Keh   Tum   Ko   Maot   Ka   Saaya   Dikhaai   Dainay   Lagay

 Poet: Salam   Machli   Shehri

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -