وزیراعلیٰ خیبرپختونخوا کی توانائی کے شعبہ میں عالمی برادری کوسرمایہ کاری کی پیشکش

وزیراعلیٰ خیبرپختونخوا کی توانائی کے شعبہ میں عالمی برادری کوسرمایہ کاری کی ...

  



پشاور(اے پی پی) خیبرپختونخوا کے وزیر اعلیٰ پرویز خٹک نے کہا ہے کہ توانائی ہماری بنیادی ضرورت ہے خیبرپختوا میں توانائی کے وسائل کی بہتات ہے صوبائی حکومت توانائی کے بحران پر قابو پانے کیلئے اپنے دستیاب آبی وسائل اور گیس و تیل کے ذخائر کو سستی بجلی کیلئے بروئے کار لانا چاہتی ہے اس ضمن میں ہم عالمی برادری کو بھی سرمایہ کاری کی پیشکش کرتے ہیں اور انکے تکنیکی تعاون کا خیر مقدم بھی کرینگے۔انہوں نے یقین دلایا کہ صوبائی حکومت توانائی کے شعبے میں سرمایہ کاری کے خواہشمند غیر ملکیوں کیلئے تمام سہولیات کے علاوہ سیکورٹی بھی یقینی بنائے گی تاہم انہوں نے کہا کہ سیکورٹی بارے جو غلط تصویر پیش کی جا رہی ہے اصل صورتحال اس سے بالکل مختلف ہے یہاں سیکورٹی کی صورتحال اطمینان بخش ہے ہم غیر ملکی سرمایہ کاروں اور سیاحوں کو تحفظ دینا بھی جانتے یہاں کے عوام بالخصوص نوجوان کافی محنتی ہیں جو غیر ملکیوں کو سرآنکھوں پر لیتے ہیں اگر غیر ملکی سرمایہ کار دوسرے صوبوں میں کام کر سکتے ہیں تو خیبر پختونخوا میں سرمایہ کاری بدرجہا زیادہ مفید اور محفوظ ہے پورے ملک کی سیکورٹی صورتحال ایک جیسی ہے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے پاکستان میں متعین جرمن سفیر ڈاکٹر سیرل نن سے گفتگو کرتے ہوئے کیا جس نے ان سے وزیر اعلیٰ سیکرٹریٹ پشاور میں ملاقات کی اور باہمی دلچسپی کے مختلف امور پر تفصیلی تبادلہ خیال کیا اس موقع پر پشاور میں متعین جرمن قونصلر،ایڈیشنل چیف سیکرٹری خالد پرویز، وزیر اعلیٰ کے پرنسپل سیکرٹری محمد اشفاق خان اور وزیر اعلیٰ شکایات سیل کے چیئرمین حاجی دلروز خان بھی موجود تھے جرمن سفیر نے حکومتی معاملات میں شفافیت لانے اورکرپشن کے خلاف ٹھوس اقدامات اور اصلاحات کے ایجنڈے کو سراہتے ہوئے کہا کہ غیر ملکی سرمایہ کاری کیلئے بھی صوبائی حکومت کی اعلان کردہ ڈویلپمنٹ پارٹنرشپ فریم ورک پر پیش رفت اور عملدرآمد انتہائی حوصلہ افزاء ہے اور یہی وجہ ہے کہ جرمن حکومت اور سرمایہ کار خیبر پختونخوا میں سرمایہ کاری کیلئے پر تول رہے ہیں

ہزارہ اور ملاکنڈ ریجنز میں سیاحتی کشش اور اسکی عالمی مقبولیت کا ذکر کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ صوبے میں سیکورٹی حالات بہتر ہونے پر ہزاروں جرمن اور یورپی سیاح یہاں آنے کے خواہشمند ہیں انہوں نے اعتراف کیا کہ صوبے میں پن بجلی کے شعبے میں سرمایہ کاری کے بہت زیادہ مواقع ہیں اور جرمن سرمایہ کار ان مواقع میں گہری دلچسپی رکھتے ہیں وزیراعلیٰ نے کہا کہ صوبے کے جفاکش لوگ خودبھی سرمایہ کاروں کو تحفظ فراہم کرنے کو تیار ہیں صوبے میں سیکورٹی صورتحال کو بہتر بنا دی گئی ہے پولیس کو سیاسی مداخلت سے پاک کیا گیا اور دیگر بنیادی اصلاحات بھی کئے گئے ہیں اینٹی ٹیررسٹ (انسداد دہشت گردی) فو رس کا قیام عمل میں لایا گیا ہے جبکہ صوبے کی تاریخ میں پہلی دفعہ انٹیلی جنس اور انوسٹی گیشن کے مربوط اور موثر نظام بھی قائم کئے گئے علاوہ ازیں صوبائی حکومت قیام امن کیلئے وفاق کو ہر طرح کا تعاون فراہم کر رہی ہے اور پاک فوج کے شانہ بشانہ آپریشن متاثرین کی مناسب دیکھ بھال میں بھی کوئی کسر اٹھا نہیں رکھی جا رہی ہے۔

مزید : کامرس


loading...