صدارتی انتخابات میں ’’وسیع پیمانے پر ووٹر فراڈ ‘‘ہو گا :ڈونلڈ ٹرمپ کا الزام

صدارتی انتخابات میں ’’وسیع پیمانے پر ووٹر فراڈ ‘‘ہو گا :ڈونلڈ ٹرمپ کا ...

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

واشنگٹن (اظہر زمان، بیورو چیف) ری پبلکن پارٹی کے صدارتی ٹکٹ ہولڈر ڈونلڈ ٹرمپ نے 8 نومبر کو ہونے والے صدارتی انتخابات کے جائز اور درست ہونے پر شکوک و شبہات کا اظہار کرتے ہوئے اسے ایک ’’وسیع پیمانے پر ووٹر فراڈ‘‘ قرار دیدیا ہے۔ ڈونلڈ ٹرمپ اپنی انتخابی مہم میں نت نئے شوشے چھوڑتے رہتے ہیں لیکن یہ ایک انتہائی سنجیدہ الزام ہے جس پر ڈیمو کریٹک کے علاوہ خود اس کی اپنی ری پبلکن پارٹی کی قیادت نے ردعمل کا اظہار کرتے ہوئے واشگاف الفاظ میں کہا ہے کہ انہیں صدارتی انتخابات میں کسی قسم کی دھاندلی کا کوئی ثبوت نظر نہیں آتا۔ انتظامیہ پر یہ الزام لگاتے ہوئے انہوں نے اپنی قیادت کو بھی نہیں بخشا کیونکہ شاید انہیں یقین ہے کہ اس سلسلے میں ان کی پارٹی ان کے موقف کی تائید نہیں کرے گی۔ وہ کہتے ہیں کہ ان کی ری پبلکن پارٹی حقائق سے آنکھیں چراتی اور بہت سیدھی سادی ہے۔ کچھ انتخابی مبصرین ٹرمپ کے اس بیان سے یہ نتیجہ اخذ کر رہے ہیں کہ اسے اب اپنی شکست نظر آ رہی ہے تاہم دوسرے مبصرین کے خیال میں اس کی پوزیشن اتنی کمزور نہیں ہے۔ تازہ جائزوں میں بلاشک وہ ڈیمو کریٹک پارٹی کی نامزد صدارتی امیدوار ہیلری کلنٹن سے اب بھی پانچ پوائنٹ پیچھے ہیں لیکن اس کی انتخابی ریلیاں بدستور کامیاب جا رہی ہیں جن میں شامل افراد کی تعداد بعض اوقات ہیلری کلنٹن کی ریلیوں سے بڑھ جاتی ہے۔ امریکی ووٹروں کے ایک طبقے نے یقیناً ٹرمپ کی 2005ء کی فحش حرکتوں والی ویڈیو منظرعام پر آنے کے بعد شدید منفی ردعمل کا اظہار ضرور کیا تھا لیکن لگتا ہے کہ عملاً اس کی وجہ سے اس کی ریلیوں میں شریک حامیوں کی تعداد میں کمی نہیں آئی۔ تاہم یہ حقیقت ہے کہ چند اہم اور فیصلہ کن ریاستوں میں وہ ہیلری کلنٹن سے کافی پیچھے ہے۔ ڈونلڈ ٹرمپ نے اپنے تازہ بیان میں کہا ہے کہ ’’میں کافی عرصے سے مختلف ریاستوں کے پولنگ سٹیشنوں پر کچھ مسائل کا ذکر کر رہا ہوں لیکن پتہ نہیں میری پارٹی کے دوسرے لیڈروں کو اس پر اتنی تشویش کیوں نہیں ہے جتنی مجھے ہے‘‘۔ ٹرمپ کہتے ہیں کہ یہ جو کچھ ہو رہا ہے اس سے ری پبلکن پارٹی کے لیڈر انکاری کیوں ہیں۔ ٹرمپ کے الزام کو سنجیدگی سے نہ لئے جانے کی ایک وجہ یہ ہے کہ اس نے ابھی تک اس سلسلے میں کوئی ثبوت فراہم نہیں کیا۔ اوہائیو ریاست کے ایک وزیر جان ہسٹڈ نے ٹرمپ کے الزام کو غیر ذمہ دارانہ قرار دیا ہے۔ ٹرمپ نے جن ریاستوں کے پولنگ سٹیشنوں پر شک و شبہ کا اظہار کیا ہے ان میں اوہائیو کی ریاست بھی شامل ہے جو ایک SWING ریاست شمار ہونے کے سبب بہت اہمیت کی حامل ہے۔ امریکی ریاستوں میں سے بیشتر کے بارے میں پہلے سے ری پبلکن پارٹی یا ڈیمو کریٹک پارتی کی طرف جھکاؤ طے شدہ ہوتا ہے۔ ہر انتخاب میں SWING ریاستوں کو حاصل کرنے کی جدوجہد زیادہ کی جاتی ہے کیونکہ حتمی فیصلہ ان ریاستوں کی وجہ سے ہی ہوتا ہے۔
ٹرمپ

مزید :

صفحہ اول -