حکومت ہوش کے ناخن لے، عوام بیروزگار ی، مہنگائی اور معاشی مشکلات کی دلدل میں پھنس چکے: سراج الحق 

حکومت ہوش کے ناخن لے، عوام بیروزگار ی، مہنگائی اور معاشی مشکلات کی دلدل میں ...

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app


ننکانہ صاحب (نمائندہ خصوصی)موجودہ حکومت کو ووٹ دینے والے اور دلانے والے دونوں شرمندہ ہیں، حکومت کی غلط پالیسیوں کی وجہ سے پاکستان کے 22کروڑ عوام بیروزگاری، مہنگائی اور معاشی مشکلات کے دلدل میں بری طرح پھنس چکے ہیں۔ امیر جماعت اسلامی پاکستان سینیٹر سراج الحق کی ننکانہ صاحب میں پریس کانفرنس۔ تفصیلات کے مطابق بیداری کشمیر مہم کے سلسلہ میں ضلع ننکانہ صاحب کے ایک روزہ تنظیمی دورہ کے موقعہ پر پریس کانفرنس کرتے ہوئے امیر جماعت اسلامی سراج الحق نے کہا کہ موجودہ حکومت کی کشمیر کے حوالے سے غلط پالیسی کی وجہ سے جماعت اسلامی پاکستان نے کشمیر کے ایشو پر عوام کو بیدار کرنے کا بیڑہ اٹھایا ہے، کشمیر پاکستان کی شہ رگ ہے ہم موجودہ حکومت کو کشمیر کا سودا کرنے کی ہرگز اجازت نہیں دیں گے، حکومت اور اس کے وزراء نے اپنے عمل سے قوم کو کشمیر کاز پر بیدار کرنے کی بجائے اور ایک لائن آف ایکشن دینے کی بجائے تقسیم کردیا ہے، ہم مودی کو اس ریجن کا چیمپیئن بننے کی اجازت ہرگز نہیں دیں گے نہ ہی مقبوضہ کشمیر کے مظلوم کشمیری مسلمانوں کے لئے عقوبت خانہ نہیں بننے دیں گے۔حکومت کو چاہیے کہ وہ ہوش کے ناخن لے اور پوری قوم کو کشمیریوں کے لئے سیسہ پلائی ہوئی دیوار بنا دے، لیکن یہ کام موجودہ حکومت کے بس کا نہیں انہوں نے کہا کہ جماعت اسلامی نے اپنا فرض سمجھتے ہوئے کشمیریوں کی آزادی کے ساتھ ساتھ پورے خطے کی اقلیتوں کے تحفظ کے لئے اور مودی حکومت کے مقاصد کو خاک میں ملانے کے لئے پاکستان اور آزاد کشمیر کے گلی کوچوں اور کریا کریا میں بیداری کشمیر مہم چلارہی ہے جس کا مقصد اس حکومت کی پالیسیوں پر بھرپور مذمت ہے جو کہ نہ صرف اپنے وعدوں سے منحرف ہوچکی ہے بلکہ عوام کی ضرورت زندگی کی بنیادی اشیائے اور ادویات کی قیمتوں میں ہوش ربا اضافہ کر چکی ہے انہوں نے کہا کہ ہر شعبہ ہائے زندگی میں گڈ گورننس کا نعرہ دینے والوں کی حکومت میں گورننس نام کی کوئی چیز نظر نہیں آتی، ہمارا وزیراعظم چین میں جاکر یہ تاثر دیتا ہے کہ میں بے اختیار ہوں اگر مجھے چار، پانچ سو لوگوں کو پکڑنے کی یا سزا دینے کا اختیار ہو تو میں پاکستان سے کرپشن ختم کردوں لیکن موجودہ حکومت ماضی کی غاصبانہ حکومتوں کا تسلسل ہے اور مشرف کا چربہ ہے انہوں نے کہا کہ ماضی میں لوگ ناجائز کام کے لئے رشوت دیتے تھے لیکن موجود حکومت میں جائز کاموں کے لئے بھی رشوت دینا پڑتی ہے اور مخصوص طریقہ سے اداروں کو بدنام کیا جارہا ہے یہ جمہوریت کے لئے صحیح منظر نامہ نہیں انہوں نے کہا کہ ہم موجودہ حکومت کو سیاسی شہید نہیں بننے دیں گے اور انشاء اللہ تعالیٰ جماعت اسلامی اس ملک میں اپنے کردار اور عمل کے ساتھ عوام کا اعتماد حاصل کرکے نہ صرف حقیقی جمہوریت لائے گی بلکہ اس نظام سے بغاوت کرتے ہوئے پاکستان کو ایک جمہوری فلاحی ریاست بنائے گی اور اسلامی نظام معیشت کو نافذ کرکے معاشی استحصال اور سودی نظام کا خاتمہ کرے گی، حکومتی وزیر پاکستان کے عوام کو ایک کروڑ نوکریاں اور پچاس لاکھ گھر اور عدالتی انصاف دینے کی بجائے 400محکمے ختم کرنے کی نوید سناتے ہیں تاکہ بیروزگاری میں مزید اضافہ ہوسکے انہوں نے کہا کہ پانامہ پیپر میں شامل 436افراد میں سے 150نام اس حکومت نے کلیئر کردئیے ہیں۔انہوں نے کہا کہ مولانا فضل الرحمن کا یہ جمہوری حق ہے کہ جس طرح ماضی میں تحریک انصاف نے 126دن کا دھرنا دیا ان کو بھی 124دن دھرنا دینے کی اجازت دی جائے۔اس موقعہ پر صوبائی امیر جماعت اسلامی سنٹر پنجاب محمد جاوید قصوری، ضلعی امیر حافظ ضیاء اللہ، امیر جماعت اسلامی ننکانہ ملک محمد اسلم اور جماعت اسلامی کی ذیلی تنظیموں کے عہدیدران بھی موجود تھے۔ قبل ازیں امیر جماعت اسلامی سراج الحق نے جامع مسجد ختم نبوت میں خطبہ جمعہ دیا اور بعد ازاں ضلع بھر کے تمام اراکین اور کارکنان کے تنظیمی اجتماع سے بھی خطاب کیا جس میں انہوں نے ملکی مسائل اور کشمیر کاز کے حوالے سے آئندہ کے لائحہ عمل کے متعلق تفصیلا گفتگو کی۔ 


سراج الحق

مزید :

صفحہ آخر -