سینئرفنکار ہمارے لئے اکیڈمی کا درجہ رکھتے ہیں‘شوبزشخصیات

  سینئرفنکار ہمارے لئے اکیڈمی کا درجہ رکھتے ہیں‘شوبزشخصیات

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

 
لاہور(فلم رپورٹر)شوبز کے مختلف شعبوں سے تعلق رکھنے والی شخصیات کا کہنا ہے کہ سینئرفنکار ہمارے لئے اکیڈمی کا درجہ رکھتے ہیں جن کے کام سے ہم رہنمائی لے سکتے ہیں،انہوں نے کہاہے کہ فن کسی کی میراث نہیں، نہ ہی کوئی ڈگری شوبز انڈسٹری میں کامیابی کی ضمانت ہوتی ہے۔ محنت اورلگن سے کام کرنے والوں کو کامیابی اورسفارشی لوگوں کو وقتی شہرت ملتی ہے۔شوبز شخصیات نے کہا کہ شوبزانڈسٹری میں جتنے بھی نامور فنکار، گلوکار، موسیقار، رائٹر، ڈائریکٹر آئے ان میں سے اکثریت ان کی ہے جو اپنی خدا داد صلاحیتوں کے بل بوتے پرکامیاب ہوئے ہیں۔ نوجوان فنکاراچھا کام کر رہے ہیں، پاکستان میں ٹیلنٹ کی کوئی کمی نہیں ہے، لیکن انہیں درست سمت میں آگے بڑھنے کیلئے ایسے آئیڈیل فنکاروں کی تلاش ہیں، جواپنے کام سے ان کے بہتررہنما بن سکیں۔شاہد حمید،شان،معمر رانا،شاہدہ منی،میگھا،ماہ نور،مسعود بٹ،اچھی خان،جرار رضوی،نادیہ علی،ہانی بلوچ،مایا سونو خان،عامر راجہ،آغا قیصر عباس،سہراب افگن،حاجی عبد الرزاق،یار محمد شمسی صابری،بینا سحر،ثناء بٹ،سدرہ نور،بی جی، عباس باجوہ،ندا چوہدری،ہنی شہزادی،اسد نذیر،نادیہ جمیل،عقیل حیدر،گلفام،طاہر انجم،طاہر نوشاد،ڈاکٹر اجمل ملک،ملک طارق،ارشد چوہدری،ڈیشی راج،آفرین خان،آشا چوہدری،احسن خان،نیلم منیر،رزکمالی،وہاج خان،اسد مکھڑا،گڈوکمال،جہانزیب علی،صوبیہ خان،ثمینہ بٹ،ناصر چنیوٹی،تابندہ علی،بابرہ علی،قیصر لطیف،ذیشان جانو،سلیم بزمی، لاڈا،ظفر عباس کھچی،مومنہ بتول،عائشہ جاوید،عارف بٹ،عاصم جمیلِ،آغا حیدر اور رضی خان نے کہا کہ نے کہا کہ پاکستان میں تو ایکٹنگ سمیت دیگر شعبوں میں تربیت دینے کے لئے باقاعدہ کوئی ادارہ نہیں تھا مگر اب کچھ سرکاری اور نجی تعلیمی اداروں میں ایکٹنگ اور فلم میکنگ کو پڑھایا جانے لگا ہے۔ یہ ایک خوش آئند بات ہے کیونکہ اس سے شوبز انڈسٹری میں آنے کے خواہشمند لوگوں کوکسی حد تک کیرئیر کوآگے بڑھانے میں سپورٹ ملے گی۔

مزید :

کلچر -