ہری مسجد کی ہلکی دھوپ میں| وحید احمد |

ہری مسجد کی ہلکی دھوپ میں| وحید احمد |
ہری مسجد کی ہلکی دھوپ میں| وحید احمد |

  

البم

ہری مسجد کی ہلکی دھوپ میں

تازہ وضو سے گیلے پاؤں

اور ٹپکتی آستینوں کی چمک میں لوگ تھے

جو  صف بہ صف

اپنا جنازہ پڑھ رہے تھے

صدر دروازے سے

اک بارود میں ڈوبا ہوا

جنت کا سٹہ باز اور حوروں کا سوداگر

اچانک سہو کا سجدہ کرنے کو آیا

اور ہری مسجد نے اپنا رنگ بدلا

قرمزی دہلیز پر جتنے بھی جوتے تھے

وہ تازہ خون پر پہلے تو  تیرے

اور پھر جمتے لہو پر جم گئے

میں بچپن میں

کئی ملکوں کے سکے اور ٹکٹیں جمع کرتا تھا

بیاضِ ذہن کے تاریک پنوں پر

میں اب جسموں کے ٹکڑے جمع کرتا ہوں

مری البم کے صفحوں کی تہوں سے خوں نکلتا ہے

مری آنکھوں سے رِستا ہے

شاعر: وحیداحمد

Album

Hari   Masjid   Ki   Hari   Dhoop   Men

Taaza   Wazu   Say   Geelay   Paaon

 Aor    Tapakti   Aasteenon   Ki   Chamak   Men   Log   Thay

Jo   Saf   Ba Saf

Apna   Janaaza   Parrh   Rahay   Thay

Sadr   Darwaazay   Say 

 Ik    Barood   Men   Dooba   Hua

Jannat    Ka   Sitta   Baaz   Aor   Hooron   Ka   Saodaagar

Achaanak   Sahv   Ka   Sajda   Karnay   Ko   Aaya 

 Aor   Hari   Masjid   Nay   Apna   Rang   Badla

Qurmazi   Daihleez   Par   Jitnay   Bhi   Jootay   Thay

 Wo   Taaza   Khoon   Par   Paihlay   To   Tairay 

Aor   Phir   Jamtay   Lahu   Par   Jam   Gaey

 

Main   Bachpan   Men 

Kai   Mulkon   K   Sikkay   Aor   Tikten    Jamaa   Karta   Tha

Bayaaz-e-Zehn   K   Tareek   Pannon   Par

 Main   Ab   Jismon   K   Tukrray   Jamaa   Karta   Hun

Miri   Album   K    Safhon   Ki   Tehon    Say   Khoon   Nikalta   Hay

Miri   Aankhon   Say   Ristaa    Hay

Poet: Waheed   Ahmad

 

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -